آرمی چیف پاکستان فٹ بال کو فیفا کی پابندی سے بچانے کیلئے کردار ادا کریں

17 جولائی 2017

لاہور( نمائندہ سپورٹس)مخدوم سید فیصل صالح حیات کا کہنا ہے کہ پاکستان فٹبال کو فیفا کی پابندی سے بچانے اور اس مقبول کھیل کا مستقبل محفوظ بنانے کے لیے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کو خط لکھ کر مدد کی اپیل کی ہے۔ دو سال تک ذاتی تعلقات استعمال کر کے ملک کو پابندی سے بچایا ہے لیکن ہر چیز کی کوئی حد ہوتی ہے۔اکتیس جولائی تک ہم نے اندرونی مسائل حل نہ کیے تو فٹبال کی عالمی تنظیم کیطرف سے پابندی کے واضح امکانات موجود ہیں۔ اگر پابندی لگ گئی تو پاکستان فٹبال کی دنیا میں تنہا ہو جائیگا۔ دو برس میں پہلے ہی بہت نقصان اٹھا چکے ہیں یہ قوم کے نوجوانوں کا نقصان ہے اور اس کے ذمہ دار وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف اور انکا خاندان ہے کیپٹن صفدر کو غیر قانونی و غیر آئینی طریقے سے پاکستان فٹبال فیڈریشن کا صدر بنانے کے لیے فٹبال ہاوس پر اسلحہ کے زور پر قبضہ کیا گیا، 2015 میں پنجاب حکومت نے کھلی دہشت گردی کرتے ہوئے فیفا اور اے ایف سی کی منظور شدہ منتخب باڈی کو طاقت کے زور پر الگ کر دیا میں نے نواز شریف کئی خطوط لکھے کہ ملک کے نوجوانوں کیساتھ یہ ظلم مت کریں لیکن آج تک انکا کوئی جواب نہیں آیا۔ ہم نے فیفا اور اے ایف سی سے ملنے والے فنڈز کے تعاون سے ملک میں کھیل کا بنیادی ڈھانچہ کھڑا کیا ہمارے ڈیویلپمنٹ پروگرامز کیوجہ سے ٹیلنٹ سامنے آیا ہمارے لڑکے اور لڑکیوں کے بیرون ممالک کلبز کیساتھ کنٹریکٹ ہوئے۔ دو سال سے ملک میں فٹبال کی کوئی سرگرمی نہیں ہوئی۔ پاکستان سپورٹس بورڈ کیطرف سے ملنے والے فنڈز تو نہ ہونیکے برابر ہیں۔ فیفا اور اے ایف سی کے فنڈز قسطوں میں ملتے ہیں انکا شفاف آڈٹ ہوتا ہے فنڈز کے غلط اور نامناسب استعمال پر پابندی لگ جاتی ہے میں نے فٹبال سے کبھی کوئی مالی فائدہ حاصل نہیں کیا ذاتی تعلقات کو استعمال کرتے ہوئے غیر ملکی کوچز کو پاکستان لایا، بھارت کو اسکے میدانوں پر بہتر گول ایوریج پر شکست دی دیگر کھیلوں میں اداروں کے سربراہ بھارت سے کھیلنے کے لیے منتیں کرتے ہیں ہم نے بھارت کیساتھ سیریز قومی عزت اور وقار کو قائم رکھتے ہوئے کھیلی۔ ہم اپنے خطے میں مسلسل بہتری کیطرف جا رہے تھے لیکن حکومتی مداخلت نے ملک کے نوجوانوں سے بہترین کھیل کے مواقع چھین لیے ہیں۔ جب فیڈریشن سنبھالی اس وقت کوئی پرسان حال نہیں تھا مسلسل محنت اور ایمانداری سے کام۔کرتے ہوئے بنیادی ڈھانچہ کھڑا کیا کھیل کی سرگرمیوں کو اس انداز سے ترتیب دیا کہ ہمارے فٹبالرز سارا سال مختلف سطح کے مقابلوں میں مصروف رہتے تھے لیکن اب صورتحال یکسر مختلف ہے نوجوان دلبرداشتہ ہو رہے ہین اور اسکی ذمہ داری صوبائی و وفاقی حکومت پر ہے۔