ایٹمی توانائی چین کی معاشی ترقی میں اہم کردار ادا کرسکتی ہے: خصوصی رپورٹ

17 جولائی 2016

واشنگٹن (آئی این پی) چین کی توانائی کی ضروریات، آلودگی میں کمی اور معاشی ترقی میں ایٹمی توانائی اہم کردار ادا کرے گی، چین ایٹمی توانائی کے انقلاب کی جانب تیزی سے بڑھ رہا ہے، چھ سے آٹھ نئے ایٹمی ری ایکٹر کی آئندہ پانچ سال کے دوران تعمیر اس کے اہداف میں شامل ہے، 2015ء میں چین کے24 ایٹمی ری ایکٹر زیر تعمیر تھے جو دنیا کے کل ایٹمی ری ایکٹروں کی ایک تہائی تعداد بنتی ہے۔ یہ بات چین کی انرجی فنڈ کمیٹی کی ایک رپورٹ میں بتائی گئی ہے، یہ کمیٹی ایک غیر سرکاری اور غیر منافع بخش ہانگ کانگ کی ایک تنظیم ہے۔تنظیم کے سربراہ ژیائو یانگ ہوانگ کا کہنا ہے کہ اگرچہ چین میں زیر تعمیر ایٹمی ری ایکٹر وں کی تعداد کے بارے میں مختلف آراء ہیں تا ہم ہمیں اس بات کا یقین ہے کہ یہ ایٹمی توانائی چین کیلئے انتہائی ضروری ہے ، اس کی تین وجوہات ہیں ،ایک وجہ یہ ہے کہ ایٹمی توانائی صاف توانائی ہے جو چین کے ماحول کو تحفظ دینے اور آلودگی کو کم کرنے کے لئے ضروری ہے جبکہ یہ چین کے توانائی کے تحفظ اور معاشی ترقی کیلئے بہت نمایاں کردار ادا کرسکتی ہے، چین اب گیس اور تیل کی درآمد پر کافی رقوم خرچ کرتا ہے جبکہ ایٹمی توانائی ان کے مقابلے میں زیادہ سستی ہے اور تیسری وجہ یہ ہے کہ چین میں ایٹمی توانائی کی ترقی کے بڑے مواقع موجودہیں اور اس سے چین کی برآمدات میں خاصا اضافہ ہو سکتا ہے۔