21ویں صدی پر صحافت کا راج

17 فروری 2015

مکرمی! موجودہ دور میں جدید ٹیکنالوجی کے ساتھ ساتھ صحافت کا بھی ہر طرف بول بالا ہے۔ موجودہ صدی کو میڈیا کی صدی کہا جاتا ہے۔ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ صحافت دور حاضرہ کے تمام تقاضوں کو پورا کرتے ہوئے آگے بڑھ رہی ہے۔ اگر حال کے برعکس ماضی میں نظر دوڑائی جائے تو صحافت کا زیادہ عروج نہیں تھا۔ لیکن موجودہ دور میں صحافت نے اپنے بل بوتے پر عوام میں وہ مقبولیت اور خاص مقام حاصل کیا ہے جس میں شک کی کوئی گنجائش نہیں۔ صحافت کی مرہون منت ملک کے شرقاً غرباً میں اب معلومات کے دریا بہنا شروع ہو گئے ہیں۔ ایک عام آدمی بھی اپنے ملکی حالات سے بخوبی واقف ہو جاتا ہے۔ معلومات و اطلاعات کے ساتھ ساتھ لوگ اب ردعمل کا اظہار کرتے ہیں۔ ناظرین و سامعین ٹولیوں کی شکل میں اور گروپوں کی شکل میں مختلف ایشوز پر تجزئیے اور تبصرے کرتے ہیں۔ ناظرین موجودہ صدی کے ساتھ ساتھ اگر آنے والی صدیوں کو بھی صحافت کی صدیاں کہا جائے تو غلط نہ ہو گا۔(آصف ذوالفقار لاہور)

صحافت میں بھونچال

آج کل صحافت کے میدان میں بھونچال آیا ہوا ہے۔ صحافیوں میں واضح تقسیم نظر آ ...