پاکستان کی کامیڈی اور سٹیج ڈرامے دنیا بھر میں مقبول ہیں:اداکارہ سنہری خان

17 فروری 2015
پاکستان کی کامیڈی اور سٹیج ڈرامے دنیا بھر میں مقبول ہیں:اداکارہ سنہری خان

سیف اللہ سپرا
ماڈل و اداکارہ سنہری خان شوبز کی دنیا میں ایک خوبصورت اضافہ ہیں۔ بنیادی طور پر فیشن ڈیزائنر ہیں اور فیشن ڈیزائننگ انہوں نے لاہور کی ایک نجی یونیورسٹی سے فیشن ڈیزائننگ میں گریجوایشن کے بعدشروع کی۔ سنہری خان کو اداکاری سے بھی دلچسپی تھی۔ چنانچہ انہوں نے اداکاری کے حوالے سے اپنی صلاحیتوں کے اظہار کے لئے سٹیج ڈرامہ (تھیٹر) کا انتخاب کیا اور پہلا ڈرامہ ”سجنی“ کے نام سے پاکستان کے ثقافتی مرکز لاہور میں واقع الفلاح تھیٹر میں سٹیج کیا اور پہلے ڈرامے میں ہی ان کی پرفارمنس پسند کی گئی اور انہیں مزید سٹیج ڈراموں میں کام ملنا شروع ہوگیا۔ سٹیج ڈراموں کے ساتھ انہوں نے فلموں میں کام بھی شروع کر دیا۔ ”تماشبین“ کے نام سے ان کی ایک پشتو فلم ریلیز ہو چکی ہے جو باکس آفس پر کامیاب رہی۔ سنہری خان کو شوبز میں آئے ابھی ایک سال بھی مکمل نہیں ہوا۔ انہوں نے محنت، لگن، فنکارانہ صلاحیتوں اور پرکشش شخصیت کے باعث بہت کم عرصے میں ایک نمایاں مقام حاصل کر لیا ہے۔ سنہری خاں آج کل بھی ایک مقامی تھیٹر میں ”جھمکے“ کے نام سے سٹیج ڈرامے میں کام کر رہی ہیں اس کے علاوہ وہ فلموں میں بھی کام کر رہی ہیں ماڈلنگ بھی کر رہی ہیں اور فیشن ڈیزائننگ بھی کر رہی ہیں۔ پاکستان کی اس باصلاحیت ماڈل ، اداکارہ اور فیشن ڈیزائنر کے ساتھ گذشتہ دنوں ایک نشست ہوئی جس میں ان کی فنی زندگی اور شوبز انڈسٹری کے حوالے سے گفتگو ہوئی جس کے منتخب حصے قارئین کی دلچسپی کےلئے درج ذیل سطور میں پیش کئے جا رہے ہیں۔
س: آپ شوبز کی دنیا میں کیسے آئیں؟
ج: شوبز میں آنے کی ایک وجہ تو یہ تھی کہ بچپن سے ہی مجھے فنون لطیفہ سے دلچسپی تھی اس لئے میں نے فیشن ڈیزائننگ میں گریجوایشن کی اور دوسری وجہ یہ تھی کہ مجھے شہرت اور معاشرے میں نمایاں مقام حاصل کرنے کا بہت شوق تھا۔ چنانچہ میں نے شوبز میں آنے کا فیصلہ کیا۔ جب گریجوایشن مکمل کر لی تو مجھے الفلاح تھیٹر کی انتظامیہ کی طرف سے سٹیج ڈرامے میں کام کی آفر ہوئی جو میں نے قبول کرلی اور کام شروع کر دیا۔ میرا پہلا ڈرامہ ”سجنی“ تھا ارشد چودھری اس ڈرامہ کے پروڈیوسر تھے۔ پہلے ڈرامے میں ہی میری اداکاری بہت پسند کی گئی اور مجھے مزید سٹیج ڈراموں میں کام ملنا شروع ہوگیا۔ اور اس طرح میرا فنی سفر شروع ہوا۔
س: آپ فلموں میں بھی کام کر رہی ہیں۔ فلم کا تجربہ کیسا رہا۔؟
ج: شوبز میں مجھے ابھی ایک سال بھی مکمل نہیں ہوا۔ میں خوش قسمت ہوں کہ اس مختصر عرصے میں مجھے بہت کامیابیاں ملیں۔ ایک کامیابی یہ ہے کہ جب سے شوبز میں آئی ہوں مسلسل سٹیج ڈرامے کر رہی ہوں۔ اور لاہور کے تقریباً تمام تھیٹرز میں ”سٹیج ڈرامے کر چکی ہوں۔ اور دوسری کامیابی یہ ہے کہ ابھی تک میری صرف ایک فلم ”تماشبین“ ریلیز ہوئی ہے یہ پشتو زبان میں بنائی گئی ہے اور جہاں بھی یہ فلم نمائش کے لئے پیش کی گئی۔ لوگوں نے بہت پسند کی اس کے علاوہ بھی اس وقت متعدد فلموں میں کام کر رہی ہوں جن میں میرے کردار مرکزی نوعیت کے ہیں۔
س: آپ فلموں اور سٹیج ڈراموں میں کام کر رہی ہیں کس شعبے میں کام مشکل ہے؟
ج: فلم کی نسبت سٹیج ڈراموں میں کام زیادہ مشکل ہوتا ہے کیونکہ سٹیج ڈرامہ میں لائیو پرفارمنس ہوتی ہے جہاں پر ری ٹیک کی گنجائش نیں ہوتی اور اچھی یا بری اداکاری کا رسپانس موقع پر ہی مل جاتا ہے۔ اس کے مقابلے میں فلم کی اداکاری کچھ آسان ہے کیونکہ وہاں پراگر پہلی ٹیک میں سین او کے نہ ہو تو دوسری ٹیک یا تیسری ٹیک میں سین اوکے ہو جاتا ہے اور سینما سکرین پر فلم کے جانے سے پہلے اس میں بہتری کی بہت گنجائش ہوتی ہے میں نے جب شوبز میں آنے کا سوچا تو سٹیج ڈرامے کا انتخاب ہی اس لئے کیا کہ تھیٹر پر سیکھنے کے بہت مواقع ہوتے ہیں۔ لائیو پرفارمنس سے اداکار میں اعتماد پیدا ہوتا ہے۔
س: آپ ٹی وی ڈراموں میں کیوں نہیں کام کر رہیں۔
ج: سٹیج ڈراموں کے حوالے سے میرے کچھ معاہدے چل رہے ہیں چونکہ سٹیج ڈراموں میں رات کو روزانہ پرفارم کرنا ہوتا ہے۔ اس لئے لاہور سے باہر نکلنا مشکل ہوتا ہے اور آج کل ٹی وی ڈراموں کی پروڈکشنز زیادہ تر لاہور سے باہر ہو رہی ہیں۔ اس لئے فی الحال ٹی وی ڈراموں میں کام نہیں کر سکتی۔
س: آپ کی فیشن ڈیزائننگ کیسی جا رہی ہے؟
ج: تھیٹر اور فلموں میںشوٹنگز کی مصروفیات کی وجہ سے فیشن ڈیزائننگ کو زیادہ وقت نہیں دے پا رہی تاہم جب موقع ملے تو کچھ ڈریسز ڈیزائن کر لیتی ہوں۔
س: فیشن انڈسٹری کے حوالے سے آپ کیا کہیں گی؟
ج: پاکستان کے ڈریسز نہ صرف اندرون ملک مقبول ہیں بلکہ بیرون ملک بھی ان کی مانگ میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ پاکستان کی فیشن انڈسٹری نے بہت ترقی کی ہے۔
س: پاکستان کی فلم انڈسٹری کے بارے میں آپ کیا کہیں گی؟
ج: عروج و زوال زندگی کے ہر شعبے میں ہوتا ہے فلم انڈسٹری کسی زمانے میں عروج پر تھی چند سالوں سے اس کے حالات اچھے نہیں تاہم ناامیدی والی بات نہیں اب کچھ اچھی فلمیں بننا شروع ہو گئی ہیں امید ہے کہ پاکستان کی فلم انڈسٹری کے حالات جلد ٹھیک ہو جائیں گے۔
س: آپ کی پسندیدہ اداکارہ کون ہیں؟
ج: میری پسندیدہ اداکارہ صائمہ ہیں اور میں ان کی اداکاری کو دیکھ کر ہی شوبز میں آئی ہوں وہ نہ صرف اچھی اداکارہ ہیں بلکہ اچھی انسان بھی ہیں۔
س: کیا آپ کو گلوکاری سے دلچسپی ہے ۔
ج: گلوکاری سے دلچسپی صرف سننے کی حد تک ہے۔
س: آپ کے پسندیدہ گلوکار کون ہیں؟
ج :میرے پسندیدہ سنگرز میں ملکہ ترنم نور جہاں لتا منگیشکر اور نصرت فتح علی خاں ہیں۔
س: کیا آپ کو گھر داری سے دلچسپی ہے؟
ج: جی ہاں۔ میں سمجھتی ہوں کہ گھرداری سے دلچسپی ہر لڑکی کو ہونی چاہئے میں نے کوکنگ کی باقاعدہ تعلیم حاصل کی ہے اور اچھے کھانے بنا لیتی ہوں۔
س: فرصت کے لمحات میں کیا کرتی ہیں؟
ج: مجھے سیاحت کا بہت شوق ہے جب ذرا فرصت ملے تو سیر کرتی ہوں۔