رابطہ کمیٹی نے 1763 ارب کے ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دیدی

17 اپریل 2018

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی) سالانہ ترقیاتی منصوبے کی رابطہ کمیٹی نے مجموعی طورپر 1763 ارب روپے کے ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دی ہے اور قومی اقتصادی کونسل کو سفارش کی ہے کہ اس کا حجم 2312 ارب روپے تک بڑھایا جائے۔ وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال نے اے پی سی سی کے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ رواں مالی سال کا مجموعی ترقیاتی ’’آؤٹ لے‘‘ 2 ہزار ارب روپے ہے اور آئندہ مالی سال میں بھی یہ 2 ہزار ارب روپے سے زائد ہو گا۔ وزارت خزانہ نے وفاقی پی ایس ڈی پی کے 750 ارب روپے کی سیلنگ دی ہے۔ تاہم ہم نے سفارش کی ہے کہ اس کو ایک ہزار ارب روپے تک بڑھایا جائے۔ اے پی سی سی کے اجلاس میں صوبوں کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں آئندہ مالی سال کے جو ترقیاتی اہداف مقرر کئے گئے ہیں ان کے تحت زراعت 3.8 فیصد‘ صنعت کے لئے 07.6 فیصد‘ مینوفیکچرنگ کے لئے 7.8 فیصد‘ ایل ایس ایم کے لئے 8.1 فیصد‘ سروسز کے لئے 6.5 فیصد کا ترقیاتی ہدف مقرر کر دیا گیا۔ آئندہ مالی سال کے لئے افراط زر کا ہدف 6 فیصد مقرر کیا گیا۔ سرمایہ کاری کا ہدف 17.2 فیصد مقرر کیا گیا۔ تجارتی توازن کا ہدف 24 ارب ڈالر مقرر کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق وزارت منصوبہ بندی کو مختلف وزارتوں کی طرف سے 1900 ارب روپے کے منصوبے موصول ہوئے تھے۔ احسن اقبال نے کہا کہ صوبوں نے ٹیم کی طرح ملک کے مفاد میں حکومت کے ترقیاتی کاموں سے اتفاق کیا ہے۔ دشمن کو یہ پیغام دیا گیا ہے کہ ہماری سیاسی سطح پر اختلافات ہو سکتے ہیں لیکن قومی ترجیحات جدا نہیں۔ حکومت نے 10 ہزار میگاواٹ بجلی نیشنل گرڈ میں شامل کی۔