حکومت پورے سال کا بجٹ پیش کریگی، سٹریٹجی پیپر کی منظوری کیلئے کابینہ اجلاس آج ہو گا

17 اپریل 2018

اسلام آباد (عترت جعفری) وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس آج طلب کرلیا گیا ہے جس میں آئندہ مالی سال کے بجٹ سٹریٹجی پیپر کی منظوری دیئے جانے کی توقع ہے۔ کابینہ کے اجلاس کے بعد ایکنک کا اجلاس بھی ہوگا جس میں آئندہ مالی سال کے چند اہم ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دی جائے گی۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ یہ فیصلہ پہلے ہی کیا جاچکا ہے کہ حکومت پورے سال کا بجٹ لائے گی جس کا سائز 53 سے 55 سو ارب روپے تک ہوسکتا ہے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ آئندہ مالی سال کیلئے سخت اہداف مقرر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ جی ڈی پی گروتھ ریٹ 6.2 فیصد، برآمدات کا ہدف 27 ارب ڈالر سے کچھ زائد جبکہ درآمدات کا ہدف 57 ارب ڈالر تک مقرر کئے جانے کی توقع ہے۔ ایف بی آر کو بھی ریونیو کے تحت ہدف دیا جائے گا۔ یہ ہدف 45 سو ارب روپے ہوسکتا ہے۔ بجٹ سٹریٹجی پیپر میں بجٹ خسارہ کو محدود رکھنے کے اقدامات بھی تجویز کئے جائیں گے۔ دفاع کیلئے قریباً ایک ہزار ارب روپے مختص کئے جانے کی توقع ہے۔
اسلام آباد (عمران علی کنڈی) حکومت نے اپوزیشن کی طرف سے صرف 4ماہ کا بجٹ پیش کرنے کا مطالبہ مسترد کر تے ہوئے 2018-19ء کے پورے سال کا بجٹ پیش کرنے کا اعلان کیا ہے۔ وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ ڈاکٹر مفتاح اسماعیل نے ایک کانفرنس میں شرکت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ عوام نے مسلم لیگ ن کی حکومت کو پورے 5سال کا مینڈیٹ دیا ہے ساڑھے چار سال کا نہیں، حکومت مکمل بجٹ پیش کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بجٹ میں سرکاری ملازموں اور پنشنروں کو خصوصی پیکیج دینے کا حکم دیا ہے۔ حکومت سرکاری ملازمین کو مزید مراعات دے گی۔ انہوں نے دفاع کے شعبہ میں بھی ضرورت کے مطابق بجٹ میں اضافہ کرنے کا اعلان کیا۔ اس سے قبل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل نے کہاکہ وہ پاکستان کی معاشی ترقی کے حوالے سے مطمئن نہیں ہیں۔ جی ڈی پی کی شرح 10فیصد سے زیادہ ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہاکہ معاشی ترقی کی شرح پچھلے 5سال میں مجموعی طور پر 4.5فیصد تک رہی جبکہ پی پی دور میں یہ صرف 3فیصد تھی۔ انہوں نے کہاکہ حکومت امیر طبقے کو ٹیکس نیٹ میں لانے کیلئے نادرا سے مدد لے گی۔ پیپلز پارٹی کے دور میں مہنگائی 11 فیصد سے زائد تھی۔ گزشتہ پانچ سال میں مہنگائی کی شرح 4 فیصد تک رہی۔ روپے کی قدر میں کمی پر مہنگائی نہیں بڑھی۔