کورم کی نشاندہی‘ بلوچستان اسمبلی اجلاس 19اپریل تک ملتوی‘ منظور کاکڑ مشیر وزیراعلیٰ مقرر

17 اپریل 2018

کوئٹہ(بیورو رپورٹ)بلوچستان صوبائی اسمبلی کا اجلاس 2روزہ وقفے کے بعد پیر کے روز سپیکر بلوچستان اسمبلی راحیلہ حمید خان کی صدارت میں حسب روایت چار بجے کی بجائے 4بجکر 35منٹ پر شروع ہوا ،پشتونخواملی عوامی پارٹی کے رکن صوبائی اسمبلی نصراللہ زیرے نے کورم پورانہ ہونے کی نشاندہی کی جس پر اسپیکر نے کہاکہ پہلے کورم پوراتھا اور بعد میں ایک ایک رکن باہر چلے گئے جس کی وجہ سے کورم ٹوٹ گیا ہے جس پر انہوں نے کورم پورا کرنے کیلئے گھنٹیاں بجانے کی ہدایت کی اور 15منٹ کے بعد پھر بھی کورم پورانہ ہوا۔سپیکر نے اجلاس 19اپریل تک ملتوی کردیا۔بلوچستان صوبائی اسمبلی کے اجلاس میں کرم ایجنسی میں افغانستان سے فائرنگ سے دو ایف سی اہلکاروں کی شہادت پر فاتحہ خوانی اور مسیحی برادری پر فائرنگ کے نتیجے میں 2افراد کی ہلاکت اور تین افراد کے زخمی ہونے کے واقعہ کی اسمبلی اجلاس میں مذمت کی گئی۔دریں اثناء بلوچستان صوبائی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر عبدالرحیم زیارتوال اور نیشنل پارٹی کے صوبائی اسمبلی میں پارلیمانی لیڈر ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہاہے کہ کورم پورا کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے ایسا محسوس ہوتاہے کہ حکومت اسمبلی کی کارروائی چلانے کیلئے سنجیدہ نہیں ہم نہیں چاہتے کہ ایک ماہ کی حکومت کیخلاف عدم اعتماد لائیں ،یہ بات انہوں نے پیر کے روز بلوچستان صوبائی اسمبلی کا اجلاس اور کورم پورا نہ ہونے کے بعد اپوزیشن کے چیمبر میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔علاوہ ازیں سابق صوبائی وزیر اور سابق رکن صوبائی اسمبلی منظور احمد کاکڑ کو وزیراعلیٰ بلوچستان کا مشیر برائے بور ڈ آف ریو نیو مقرر کردیا گیا، پیر کو حکومت بلوچستان کے جاری کردہ اعلا میے کے مطابق گورنر بلوچستان نے وزیراعلیٰ بلوچستان کی تجویز پر منظور احمد کاکڑ کو وزیر اعلیٰ کا مشیر برائے بور ڈ آف ریو نیو مقرر کردیا ہے اور انہیں صوبائی وزیر کے برابر اختیارات تفویض کئے گئے ہیں ،منظور احمد کاکڑ کو الیکشن کمیشن نے فلور کراسنگ کر نے پر ڈی سیٹ کردیا تھا ۔