برطانوی پارلیمنٹ کے سامنے کشمیر میں بھارتی مظالم کیخلاف مظاہرہ ‘مارچ

17 اپریل 2018

لندن (نمائندہ خصوصی) برطانوی پارلیمنٹ کے باہر کشمیر میں بھارتی مظالم کے خلاف خواتین اور بچوں کا احتجاج۔ مظاہرے کا اہتمام بیرسٹر عبدالمجید تریمبو اور نذیر شاہ نے کیا۔ احتجاج میں کونسلر شاہدہ مہربان،جنرل سیکرٹری جنرل وویمن ونگ پی پی سعمیہ علی، صدر پیپلزپارٹی وویمن ونگ برطانیہ انجم جرال، رضیہ شیخ صدر پیپلز پارٹی وویمن ونگ برمنگم، کونسلر عاصمہ راٹھور، رخشندہ جرال، رانی عاصمہ، شاہدہ جرال، بلقیس راجہ، شمیم شال سمیت برطانیہ بھر سے مختلف سیاسی، سماجی تنظیموں کی خواتین نے شرکت کی۔ مودی کے خلاف اور کشمیر کی آزادی کے حق میں نعرے لگائے گئے۔ مظاہرین نے بینرز اور پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر کشمیر کی آزادی کیلئے نعرے درج تھے۔ مظاہرین نے پارلیمنٹ سکوائر میں احتجاجی مارچ بھی کیا۔ احتجاج میں لیوٹن سے ممبر پارلیمنٹ کیلوین ہوپکن نے بھی شرکت کی۔ ایوب راٹھور، راجہ اسحاق خان، بوبی امین سمیت دیگر کشمیری رہنما بھی موجود تھے۔اپوزیشن لیڈر چودھری یاسین نے کہا مودی کا چہرہ پوری دنیا کو دکھانا بہت ضروری ہے۔ احتجاج میں ہم سب اکھٹے ہوں گے تو ایک اچھا اور مضبوط پیغام کشمیر کے حوالے سے دنیا کو جائے گا۔ برطانوی حکومت اور سیاستدانوں کے باعث آج کشمیر کا یہ حال ہو چکا ہے۔ برطانیہ کشمیر کے مسئلے کی آواز اٹھانے کے لئے مؤثر ملک ہے۔ مظاہرے کے بعد بھارت کے خلاف ہم سب مل کر اقوام متحدہ کے سامنے احتجاج کریں گے۔ اقوام متحدہ، برطانیہ اور امریکہ کی جانب سے جو دہرا کردار ادا کیا جا رہا ہے کشمیر کے مسئلے پر اس کو بھی بے نقاب کرنا ہوگا۔ راجہ فاروق حیدر وزیراعظم آزاد کشمیر نے کہا بھارت مسئلہ کشمیر حل کرنا نہیں چاہتا۔ کشمیر کے مسئلے کو ہمیں عالمی سطح پر لانا ہوگا۔ لائن آف کنٹرول پر بھی بھارتی جارحیت جاری ہے۔ بھارت نے لائن آف کنڑول پر ایسے آلات لگائے ہوئے ہیں جو اسرائیل سے خریدے گئے ہیں۔ یہ بات پریس کانفرنس میں کہی۔ دریں اثنا دولت مشترکہ کے سربراہان کا لندن میں اجلاس18اپریل کو شروع ہوگا۔احتجاج اور مظاہروں کی ایک جھلک‘دو وزرائے اعظم کے خلاف بڑے پیمانے پر لندن میں مظاہرے ہوں گے۔ وزیراعظم بنگلہ دیش حسینہ واجد کے خلاف خالدہ ضیاء کے حامی سنٹرل لندن میں احتجاجی مظاھرہ کریں گے۔ مودی کے خلاف پاکستانی و کشمیری کمیونٹی پارلیمنٹ ہائوس اور ٹین ڈاؤننگ سٹریٹ کے باہر مظاہرہ کریں گے۔بھارت اور بنگلہ دیش کی حکومتوں کے ظلم کے خلاف سنٹرل لندن میں بسیں چلائی جا رہی ہیں‘4روز تک سروس رہے گی۔بڑی تعداد میں مسلح اور غیر مسلح پولیس کے دستے تعینات کر دیئے گئے۔سنٹرل لندن میں خاص طور پر پارلیمنٹ کے اطراف میں ٹریفک جام ہے۔ لندن کے پی آئی کے مطابق برطانیہ میں مقیم جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے مرکزی رہنما وسفارتی شعبے کے سربراہ پروفیسر راجہ ظفرخان نے مودی کے خلاف مظاہرے میں برطانیہ میں موجود تمام محب وطن کشمیریوں سے بھرپور شرکت کی اپیل کی۔ راجہ ظفرخان نے 18اپریل کولندن میں کشمیریوں پر بھارتی افواج کی طرف سے ظلم وتشدد، قتل وغارتگری اور بھارتی ریاستی دہشت گردی کے خلاف اپنی آواز کو اقوام عالم تک پہنچانے کے لئے اور مقبوضہ کشمیر کے آزادی پسند عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لئے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے خلاف ہونے والے احتجاج کو کامیاب بنانے کے لئے برطانیہ میں موجود تمام محب وطن کشمیریوں سے بھرپور شرکت کی اپیل کی۔