گیس کے بلوں میںکئی گنا اضافے سے صارفین پریشان

17 اپریل 2018

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سوئی سدرن گیس کمپنی نے بلاک سترہ ایف بی ایریا کے رہائشی کومارچ کا بل 9891روپے بھیجا۔ بل کے مطابق صارف نے ماضی کیتمام ادا کئے ہیں جن کی اوسط گرمیوں میں چار سواورسردیوں میں آٹھ سو روپے رہی۔ گیس کمپنی نے صارف کے پوچھنے پربس اتنا کہا کہ بل ادا کردیں اورعندیہ دیا ہے کہ آئندہ بھی اس قسم کا بل آسکتا ہے۔ اوگرا نے انہیں ایک سال تک کے اضافی چارجز لینے کی اجازت دی ہے یہ ایک تنازعہ ہے لیکن گیس کمپنی کو اختیار ہے کہ بل کی عدم ادائیگی کی صورت میں اس پر سر چارج وصول کرسکے۔ گیس کمپنی کئی مہینوں سے اپنے کئی صارفین پر یہ ستم کررہی ہے۔ اسٹیٹ بینک کی سہ ماہی رپورٹ کے مطابق سوئی سدرن کراچی سے لاہور تکع آر ایل این جی پائپ لائن منصوبہ بچھانے پر کام کررہی ہے۔منصوبے پر 65ارب روپے لاگت آئے گی جسے وہ مقامی ذرائع سے پورا کررہی ہے۔ کے الیکٹرک کے ساٹھ سرچارجز کی ادائیگی کے معاملے کوبھی اسی تناظر میں دیکھا جاناچاہیے۔ ایس ایس جی سی نے الیکٹرک کمپنی کی گیس روک کر شہر میں بجلی کا بحران پیدا کردیا ہے۔یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ گیس کمپنی کے اعلیٰ عہدیداران اپنی کار گزاریوں کی وجہ سے قانونی عتاب کا شکارہوتے آئے ہیں۔ ڈاکٹر عاصم اورکئی افسران کیسز بھگت رہے ہیں۔ کیا بعید ہے کہ وزیراعظم شاہد خاقان اور مشیر خزانہ مفتاح اسماعیل اس سے مستثنیٰ ہے۔ آخر تو کسی نے اسٹیل مل کی گیس بند کرنے کا جواب بھی تو دینا ہے۔