پوری دنیا بھارت کو ایٹمی ہتھیاروں سے لیس کر رہی ہے, پاکستان کو چند ایف 16 نہ دینا زیادتی ہے:وزیر دفاع

16 مئی 2016 (19:27)

وفاقی وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ پاکستان امریکہ تعلقات میں اتار چڑھاﺅ آتا رہتا ہے مجموعی طورپر تعلقات بہتر ہیں پوری دنیا بھارت کو ایٹمی ہتھیاروں سے لیس کر رہی ہے لیکن پاکستان کو چند ایف 16طیارے نہ دینا زیادتی ہے ہم اپنے دفاع کے لیے کسی دوسرے ملک سے بھی دفاعی سازوسامان حاصل کر سکتے ہیں امریکی انتظامیہ ایف 16طیاروں کے حق میں ہے جبکہ کانگریس کے بعض ارکان مخالف ہیں امریکہ میں پاکستان مخالف کئی لابیز کام کررہی ہیں جن میں بھارت سرفہرست ہے جو چیز پاکستان اور دنیا میں لوگوں کو بے گھر کر رہی ہے وہ ختم ہونی چاہیے ان خیالات کا اظہار خواجہ آصف نے ایک تقریب میں شرکت کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کیا ان کا کہنا تھا کہ مہاجرین کا مسئلہ نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا کو درپیش ہے۔ افغان مہاجرین کی واپسی کے حوالہ سے بات چیت جاری ہے ۔افغان حکام بھی چاہتے ہیں مہاجرین کا مسئلہ حل ہو۔وزیر ستان میں دوسال سے آپریشن جاری ہے اس کے نتیجہ میں لوگ بے گھر ہوئے ہم ان کو اپنے وسائل سے دوبارہ اپنے گھروں میں واپس بھیج رہے ہیں سب لوگ چند ماہ میں گھروں کو واپس چلے جائیں گے۔ پاکستان اور دنیا میں لوگوں کو جوچیز بے گھر کر رہی ہے وہ ختم ہونی چاہیے اس کی وجہ ملکوں ، شہروں اور گھروں میں عدم استحکام ہے ان کا کہنا تھا کہ چار فریقی گروپ کا اجلاس شروع ہو رہا ہے اس حوالہ سے افغان حکومت کا بیان بھی آگیا ہے ہم اس میں بڑا تعمیری کردار ادا کر رہے ہیں ۔ افغانستان کا امن پاکستان کے امن سے براہ راست وابستہ ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ چار فریقی گروپ افغانستان میں امن لانے میں کامیاب ہوجائے۔ان کا کہنا تھا کہ پوری دنیا بھارت کو روایتی ہتھیاروں سے آراستہ کر رہی ہے اور یہ ہتھیار فراہم کررہی ہے وہاں پر پاکستان کے لیے چند طیارے روک لینا زیادتی ہے اگر ہمارے لیے اس طرح کی سہولت کو روکا گیا تو پھر ہم اپنے دفاع کے لیے ہتھیار دنیا میں دوسری موجود مارکیٹوں سے خریدیں گے ہم نہیں چاہتے ان چیزوں کے امریکہ کے ساتھ تعلقات پرمنفی اثرات پڑیں ہم چاہتے ہیں کہ ہمارا امریکہ کے ساتھ مضبوط تعلق برقرار رہے مگر ان مسائل کو ایف سولہ کی سپلائی روک کرگھمبیر کیا جا رہا ہے۔ میرا خیال ہے کہ ایف سولہ طیاروں کی فراہمی روک کر امریکہ ہمارے دہشت گردی کے خلاف کوششوں اور قربانیوں کی نفی کررہا ہے۔ امریکی انتظامیہ آج بھی ایف سولہ فراہم کرنے کے حوالہ سے ہمارے حق میں ہے اگر ہمیں یہ طیارے نہیں ملتے تو پھر ہم کوئی اور ذریعہ ڈھونڈیں گے خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ ہر طرح کے طالبان پاکستان میں امن کے دشمن ہیں۔ہماری سلامتی کے دشمن ہیں ہم کسی قسم کی تفریق نہیں کررہے جہاں تک شکیل آفریدی کا مسئلہ ہے یہ پاکستان کا اندرونی معاملہ ہے ۔ پاکستانی عدالتوں نے اسے سزا دی ہے ۔امریکہ کو مطالبہ کرتے وقت یہ سوچنا چاہیے کہ کیا وہ اپنی سرزمین پر اس قسم کا جرم ہو جائے تو اس کی معافی دیں گے یا کسی اور ملک کے حوالہ کریں گے اگر امریکہ ہمیں اپنی جگہ ڈال کر دیکھے تو وہ ہمارے موقف کی تعریف کرے گا۔