مینڈیلا کو 1962ء میں سی آئی اے کی مخبری پر پکڑا گیا: رپورٹ

16 مئی 2016

لندن (بی بی سی) ایک رپورٹ کے مطابق 1962ء میں جنوبی افریقہ کے سابق صدر نیلسن مینڈیلا کی گرفتاری امریکہ کے خفیہ ادارے سی آئی اے کے ایک ایجنٹ کی فراہم کردہ معلومات کے نتیجے میں عمل میں آئی تھی۔ یہ انکشاف برطانوی اخبار سنڈے ٹائمز میں شائع ہونے والی رپورٹ میں کیا گیا ہے جو سی آئی اے کے سابق ایجنٹ ڈونالڈ رکارڈ کے انتقال سے قبل کئے گئے انکے ایک انٹرویو پر مبنی ہے۔ نیلسن مینڈیلا نے ملک میں سیاہ فاموں کیخلاف ہونیوالے امتیازی سلوک اور انصاف کیلئے نسل پرست حکومت کے خلاف جدوجہد شروع کی تھیں جس پر حکومت نے انہیں گرفتار کر کے جیل میں ڈال دیا تھا اور وہ 27 برس قید میں رہنے کے بعد 1990ء میں رہا ہوئے تھے۔ رہائی کے بعد وہ ملک کے صدر منتخب ہوئے تھے۔ اس انٹرویو سے بظاہر وہ شک سچ ثابت ہو جاتا ہے کہ سی آئی اے نیلسن مینڈیلا کا پیچھا کیا کرتی تھی۔ اس سے سی آئی اے پر اس سے متعلق اپنی دستاویزات کو عام کرنے کا بھی دباؤ بڑھیگا جس سے مینڈیلا کی گرفتاری میں امریکہ کے شامل ہونے اور اس وقت کی نسل پرست حکومت کی حمایت کرنے سے متعلق اس کے کردار کے بارے میں بھی پتہ چل سکے گا۔

نفس کا امتحان

جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف خواتین کی مہم ’می ٹو‘ کا آغاز اکتوبر دو ...