چیئرمین واپڈا متوجہ ہوں

16 مارچ 2010
مکرمی! 18.02.2010 کو گلی نمبر 6 رزاق کالونی (تاجپورہ) میں ایک مکان کی تعمیر کے دوران ایک بانس بجلی کی مین تاروں پر گرنے سے تاریں آپس میں ٹکرانے سے ٹوٹ کر زمین پر گر گئیں۔ جس سے ہمارا ٹرانسفارمر اور ہمارے گھر کا میٹر بھی جل گیا۔ ہم نے واپڈا سب ڈویژن تاجپورہ میں بروقت تحریری درخواست دے دی۔ جس کی 22.02.2010 کو کمپلینٹ نمبر 49 درج کر دی گئی۔ ہم نے واپڈا سب ڈویژن تاجپورہ جا کر میٹر ریڈر اور میٹر انسپکٹر سے رابطہ کیا تو انہوں نے ہمیں بتایا کہ آپ کا میٹر نیا لگے گا اگر آپ اپنا نیا میٹر لگوا لیں گے تو ٹھیک ہے ورنہ جب تک نیا میٹر نہیں لگتا ہم آپ کو اس مہینے ایوریج 134 یونٹ کا بل بھیج دیں گے لیکن اگلے مہینے سے اس سے بھی ڈبل بل بھیجیں گے۔ ہمارے بتانے پر کہ ہمارا بجلی کا خرچ اتنا زیادہ نہیں ہے تو میٹر ریڈر اور میٹر انسپکٹر کہنے لگے کہ بجلی چاہے جتنی بھی استعمال کرو آپ کو ایوریج بل اتنا ہی ادا کرنا پڑے گا۔ میٹر لگوانے کے سلسلے میں ہم نے لائن سپرنٹنڈنٹ سے رابطہ کیا تو پتہ چلا کہ دسمبر 2009ءسے تاحال نئے میٹر نہیں آ رہے۔ ہماری چیئرمین واپڈا سے درخواست ہے کہ عوام پر اتنا ظلم نہ کیا جائے۔ واپڈا ملازمین کو عوام پر کلہاڑا چلانے سے روکا جائے۔ ہمارا میٹر جلد از جلد تبدیل کیا جائے تاکہ ہمیں اس عذاب سے نجات مل سکے۔(محمد رمضان ارشد ولد نذیر احمد - مکان نمبر 22 گلی نمبر 7 رزاق کالونی (تاجپورہ) لاہور۔ حوالہ نمبر 05154303090020U میٹر نمبر S-4118866)