فیروز والہ: موسم گرماشروع ہوتے ہی جعلی مشروبات کی فیکٹریاں فعال

16 اپریل 2018

فیروزوالہ (نامہ نگار)شیخوپورہ میں گرمی کاآغاز ہوتے ہی ناقص مشروبات کی فروخت شروع ہوگئی ہے اورایک رپورٹ کے مطابق ضلع شیخوپورہ میں اس وقت 12سے زیادہ ایسی فیکٹریاں چل رہی ہیں جہاں پر انتہائی زہریلے محلول کی مددسے تمام اعلیٰ برانڈ کے مشروبات تیار کیے جاتے ہیں اوران مشروبات کی تیاری میں سرکاری نلوں کا آلودہ پانی استعمال کیاجاتاہے اوریہ مشروبات جگر اورمعدے کے امراض کاباعث بن رہے ہیں دریں اثناء موسم کی تبدیلی کے ساتھ ہی گیسٹرو کے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوگیاہے ضلع شیخوپورہ کے سرکاری اورپرائیویٹ شفاخانوں میں گذشتہ 24گھنٹوں کے دوران گیسٹرو کے لائے جانے والے مریضوں کی تعداد 234بتائی گی ہے پروفیسر ڈاکٹر بابر امین نے کہاکہ شیخوپورہ میں کئی علاقوں میں سیوریج اورپینے کے پانی کے پائپ مکس ہوچکے ہیں جس کی وجہ سے یہاں گیسٹرو پرقابو پانے کے لیے بہت بڑے اپریشن کی ضرورت ہے انہوں نے شہریوں پرزور دیاکہ وہ سرکاری نلوں کاپانی سونگھ کراستعمال کریں اور ٹیوب ویلوں اور واٹر فلٹریشن پلانٹس سے پانی لاکر استعمال کریں اورپانی کوابال کرٹھنڈا کرکے استعمال کیاجائے۔