گورنمنٹ گرلز ہائی سکول جہانیاں میں طالبہ پر ٹیچر کا وحشیانہ تشدد

16 اپریل 2018

جہانیاں (نمائندہ نوائے وقت)گورنمنٹ گرلز ہائی سکول جہانیاں میں پانچویں جماعت کی طالبہ سمیرا پرسکول ٹیچر کا تشدد ، جسم پر ڈنڈوں کے نشان پڑ گئے میڈم ثریا منیر نے کلاس کی بچیوں پر بہیمانہ تشدد کیا جس کی وجہ سے سمیرا 3گھنٹے کلاس روم میں بیہوش پڑی رہی ۔والدین نے پولیس سے ڈاکٹ حاصل کر کے میڈیکل کروالیا جس میں تشدد ثابت ہو گیا تفصیل کے مطابق گورنمنٹ گرلز ہائی سکول جہانیاں کی ٹیچر ثریا منیر نے بچیوں پر تشدد معمول بنا رکھا ہے سکول کی ہیڈ مسٹریس کی بھابھی ہونے کے ناطے شکایات کے باوجود ہیڈ مسٹریس کوئی کاروائی نہیں کرتی ۔ تحصیل پریس کلب جہانیاں میں متاثرہ بچی کے بھائی محمد سلیم اور بہنوئی انوار نے بچی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ ہماریء بچی پر بہت ظلم ہوا ہے ہم غریب لوگ ہیں ہماری کوئی نہیں سنتا ۔ گزشتہ روز ہیڈ مسٹریس نے میری بہن کو اپنے دفتر میں بلوا کر کاروائی نہ کرنے پر منت سماجت کی جب میری بہن نے کہا کہ میرے ساتھ بڑا ظلم ہوا ہے مجھے بے تحاشہ تھپڑوں ، مکوں اور جوتوں سے پیٹا گیا ہے ہم تو قانونی کاروائی کریں گے ۔اس پر ہیڈ مسٹریس نے میڈم ثریا منیر سے ڈنڈے منگوا کر بچیوں کے سامنے نظر آتش کر دیئے اور آئندہ ایسی کارروائی نہ کرنے کا وعدہ کیا ۔ بچوں میں انتہائی خوف و ہراس پایا جاتا ہے ،سمیرا کے ورثاء نے اسسٹنٹ کمشنر جہانیاں کو بھی درخواست گزاری ہے انہوں نے اپنے دفتر میں آج 10بجے طلب کر رکھا ہے ۔ متاثرہ کے ورثاء نے ایس او ایجوکیشن خانیوال ، ڈی او خانیوال ، ڈی سی خانیو ال ، کمشنر ملتان سے میڈم ثریا منیر کے خلاف فوری نوٹس لینے اور قانوی کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔