پنجاب ٹیچرز یونین کے قافلے آج اسلام آباد روانہ‘ کل پارلیمنٹ کے سامنے دھرنا ہو گا

16 اپریل 2018

ملتان ‘ لودھراں (نمائندہ نوائے وقت‘ خبرنگار) پنجاب ٹیچرز یونین کے زیراہتمام نواں شہر چوک سے ملتان پریس کلب تک اپنے مطالبات کے حق میں مشعل بردار ریلی نکالی گئی جس کی قیادت پنجاب ٹیچرز یونین کے سینئر نائب صدر پنجاب رانا الطاف حسین ضلعی صدر چوہدری محمد حسین طاہر وڑائچ نے کی اور مطالبات کے حق میں نعرے بازی کی ریلی میں دیگر اساتذہ رہنماؤں عابد فرید بزدار اشفاق انصاری سرور قریشی ملک الطاف احمد رانا عبدالقیوم نازش مہر اقبال اللہ دتہ دھرالہ ملک عبدالغفار طارق ملک مختار ونیس محمد بلال حافظ عبداللہ و دیگر نے شر کت کی اس موقع پر اساتذہ رہنماؤں رانا الطاف حسین ‘چوہدری محمد حسین طاہر وڑائچ نے خطاب کرتے کہا موجودہ حکومت بجٹ سے پہلے اساتذہ کی تنخواہوں میں بڑھتی ہوئی مہنگائی کے پیش نظر اضافہ کرے اور 2008 ء سے منجمد ہاؤس رینٹ بحال کیا جائے کتنی ستم ظریفی کی بات ہے کہ 2018 ء کے پے سکیلز کے مطابق تنخواہیں لینے والے ملازمین کو ہاؤس رینٹ 2008 ء کے پے سکیلز کے مطابق دیا جا رہا ہے مگر سکیل نمبر 14 میں کام کرنے والے پی ایس ٹی اساتذہ کو ہاؤس رینٹ محض 1960 روپے دیا جا رہا ہے ۔ 2008 ء سے منجمد ہاؤس رینٹ بحال کرے گریڈ سولہ سے لیکر گریڈ بیس تک تمام اساتذہ کو ون سٹیپ پر پرموشن دی جائے الطاف حسین ‘ چوہدری محمد حسین طاہر وڑائچ نے کہا ملتان سمیت صوبہ بھر سے تعلق رکھنے والے ہزاروں اساتذہ آج 16 اپریل کو ملتان سے اسلام آباد تک پنجاب ٹیچرز یونین کے زیراہتمام لانگ مارچ کاآغازکریں گے کل 17 اپریل کو اساتذہ کے قافلے اسلام آباد پہنچیں گے اور پری کلب اسلام آباد سے پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے لانگ مارچ کے شرکاء پہنچ کر احتجاجی دھرنا دیں گے۔لودھراں سے خبرنگار کے مطابق پنجاب ٹیچر ز یو نین کا ایک ہنگا می اجلاس زیر صدارت رانا محمد فاروق خاں صدر پنجاب ٹیچر ز یو نین ضلع لو دھراں کی رہا ئش گا ہ پر منعقد ہوا ۔ جس میں فیصلہ کیا گیا کہ حکو مت پنجاب نے ہما رے مطالبات تقسیم نہ کیے تو احتجا ج کا سلسلہ تعلیمی بائیکاٹ اور سکو لوں کی تالہ بندی تک پھیل جا ئے گا۔ اساتذہ جا ئز مطالبات کی منظوری کیلئے کل بروز منگل اسلام آباد پر یس کلب کے سامنے احتجا جی مظاہر ہ اور پارلیمنٹ ہاؤس تک پر امن ریلی اور دھر نا دیا جا ئے گا۔ پا کستان میں یکساں تعلیمی نظام اور یکساں نصاب کا نفاذ کیا جا ئے اساتذہ کے ساتھ کیے گئے وعدوں کے مطابق اپ گریڈیشن کی جا ئے ۔ اساتذہ کو ذہنی ٹارچر کر نے کا سلسلہ بندکیا جا ئے ۔ پرانے پی ایس ٹی اساتذہ کو اضافی دو ترقیاں دی جائیں ۔ ای ایس ٹی کو گریڈ 16اورایس ایس ٹی کو17دیا جا ئے ۔ سر پلس اساتذہ کو واپس سکو لو ں میں بھیجوایا جائے۔ تما م کنٹریکٹ اساتذہ کو مستقل کیا جا ئے ۔ ITالا ؤنس ، ہیڈ ٹیچر الاؤنس، ہاؤس رینٹ اور میڈیکل الا ؤنس میں سو فیصد اضافہ کیا جا ئے ۔ غیر تدریسی ڈیوٹی مثلا یو پی ای کا خاتمہ فوری طور پر کیا جا ئے۔ سٹوڈنٹس ڈراپ آوٹ ، سٹو ڈنٹس حاضری اور اساتذہ کی سو فیصد حاضری پر سزاؤں کا سلسلہ بند کیا جا ئے ۔ مار چ2018میں ایل این ڈی ٹیسٹ پر دی جا نے والی سزائیں واپس لی جا ئیں ۔ عمر ے کی ادائیگی کیلے چھٹیوں کی تعداد 20دن سے بڑھا کر 1ما ہ کی جا ئے ۔ ٹیچر سن کا کو ٹہ بحا ل کیا جائے ۔ تبادلہ جا ت پر عائد خو دساختہ پابندی کو بحال کیا جائے۔ بھر تی کر نے سے پہلے پرانے ٹیچر ز کو یہ حق دیا جا ئے وہ خالی اسامی پر تبادلہ کراسکے ۔

EXIT کی تلاش

خدا کو جان دینی ہے۔ جھوٹ لکھنے سے خوف آتا ہے۔ برملا یہ اعتراف کرنے میں لہٰذا ...