ڈی پی او خوشاب کی گاڑی تلے آ کر نوجوان جاں بحق، نعش غائب، 3 لاکھ دیکر راضی نامہ

16 اپریل 2018

سرگودھا (نامہ نگار‘ آن لائن) ڈی پی او خوشاب کی گاڑی تلے آکر 32سالہ نوجوان موقع پر جاں بحق ہوگیا۔ حادثہ کے بعد ڈی پی او خوشاب نے رکنے کی زحمت گوارا نہ کی اور آگے نکل گئے، پولیس نے ڈی ایچ کیو منتقل ہونے والی نعش غائب کر دی، ہسپتال عملہ اور پولیس حادثہ سے لاعلمی کا اظہار کرتے رہے۔ تفصیلات کے مطابق ڈی پی او خوشاپ ابرار حسین نیکو کارہ سرکاری گاڑی پر محکمانہ کام سے براستہ بھلوال لاہور جارہے تھے کہ تھانہ جھال چکیاں کے علاقہ بونگی بالا کے قریب موٹر سائیکل پر روڈ کراس کرنے والا نواب پور منہاس کا رہائشی بدنصیب 32سالہ فیاض ولد محبت علی تیز رفتار گاڑی کی ذد میں آگیا اور زخموں کی تاب نہ لاتے موقع پر ہی دم توڑ گیا۔ حادثہ میں مرنے والا فیاض علاقہ کے مہر سلیمان منہاس کے پاس ملازم تھا۔ سرکاری ذرائع کے مطابق حادثہ کے بعد نعش کو پوسٹ مارٹم کے لئے ڈی ایچ کیو ہسپتال منتقل گیا گیا مگر حادثہ کی اطلاع ملنے پر جب میڈیا نمائندگان سے تھانہ جھال چکیاں پولیس، ڈی پی او آفس اور ڈی ایچ کیو ٹیچنگ ہسپتال رابطہ کیا تو ہر جگہ موجود افراد نے اپنے اوپر موجود غیر معمولی دبائو کی وجہ سے کچھ بھی بتانے سے انکار کرتے ہوئے حادثہ سے مکمل لاعلمی کا اظہار کیا۔ دوسری جانب مبینہ طور پر محکمہ پولیس کی طرف سے حادثہ میں مرنے والے بدنصیب شخص فیض کے ورثاء پر دبائو بڑھا دیا گیا اور انہیں صلح کے لئے مجبور کیا جانے لگا، بعض ذرائع کے مطابق پولیس نے فیض کے ورثاء کو مبلغ 3لاکھ روپے دے کر راضی نامہ کے لئے مجبور کیا اور انہوں نے مجبوراً خاموشی اختیار کر لی۔ آن لائن کے مطابق پولیس کا کہنا ہے حادثے کے وقت ڈی پی او خوشاب گاڑی میں موجود نہیں تھے۔ حادثہ موٹر سائیکل سوار کی اپنی غلطی سے ہوا۔