پاکستان کا مدلل موقف مودی یو این اسمبلی میں خطاب سے فرار

15 ستمبر 2015
پاکستان کا مدلل موقف مودی یو این اسمبلی میں خطاب سے فرار

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا 70واں اجلاس آج شروع ہوگا۔ پاکستان کنٹرول لائن اور ورکنگ باﺅنڈری پر بھارت کی جانب سے خلاف ورزیوں اور دہشت گردی میں ”را“ کے کردار سمیت دیگر معاملات کے بارے میں شواہد اقوام متحدہ میں جمع کرائے گا۔ وزیراعظم نواز شریف سے 30 ستمبر کے خطاب میں ایک بار پھر مسئلہ کشمیر زوردار طریقے سے اُٹھانے کی توقع ہے۔ پاکستان کے خوف سے لرزاں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے اقوام متحدہ کی 70ویں سالگرہ تقریب کے موقع پر جنرل اسمبلی سے خطاب منسوخ کر دیا ہے۔
عیاری مکاری اور پاکستان دشمنی میں نریندر مودی اپنے کسی بھی پیشرو وزیراعظم سے آگے ہیں۔ پاکستان کےخلاف مودی کی ہرزہ سرائی میں اضافہ اس لئے بھی ہوتا ہے کہ پاکستان کی طرف سے ان کو عموماً ترکی بہ ترکی جواب نہیں دیا جاتا۔ اب کچھ عرصہ سے خصوصی طور پر بنگلہ دیش کے دورے کے موقع پر مودی کی طرف سے پاکستان توڑنے کی سازش میں شامل ہونے کے دعوے کے بعد پاکستان نے شدید ردعمل کا اظہار کیا۔ پاکستان میں بھارت کی مداخلت کے ثبوت عالمی برادری اور اقوام متحدہ تک پہنچائے گئے اور مزید وزیراعظم نواز شریف اپنے خطاب میں پیش کرینگے اس لئے مودی پسپائی اختیار کرنے پر مجبور ہوئے ہیں۔ انکے پاس پاکستان کے موقف کا مدلل جواب ہے ہی نہیں اس لئے انہوں نے عافیت اقوام متحدہ میں خطاب نہ کرنے ہی میں جانی اور بے وزن اور بے دلیل خطاب کےلئے خاتون وزیر کو آگے کر دیا۔ پاکستان کو ایسی پالیسیاں اور سفارتکاری جاری رکھنی چاہئے۔ بھارت آپ کی کمزوری سے فائدہ اٹھاتا ہے جب آپ مضبوط اور مدلل موقف کے ساتھ بات کریں گے تو اس کیلئے آپ کو دبا¶ میں لانے کی گنجائش نہیں رہے گی۔