سپریم کورٹ میںپنجابی زبان کو فروغ دینے سے متعلق درخواست ابتدائی سماعت کیلئے منظور

15 ستمبر 2015
سپریم کورٹ میںپنجابی زبان کو فروغ دینے سے متعلق درخواست ابتدائی سماعت کیلئے منظور

اسلام آباد (صباح نیوز) سپریم کورٹ نے پنجابی زبان کو فروغ دینے سے متعلق درخواست کو ابتدائی سماعت کے لئے منظور کرتے ہوئے معاملہ تین رکنی بینچ کی تشکیل کے لیے چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کو بجھوادیا۔سوموار کوجسٹس امیر ہانی مسلم کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے پنجابی کو رائج کرنے سے متعلق محمد سمیع اور سید کریم کی جانب سے دائر درخواستوں کی سماعت کی۔ درخواست گزار محمد سمیع نے عدالت کو بتایا کہ پنجاب نے پنجابی اور علاقائی زمان کو رائج کرنے کے لیے ابھی تک کچھ نہیں کیا سپریم کورٹ نے بھی اردو کیس میں فیصلہ تحریر کرنے کا حکم دیا لیکن پنجابی زبان کو رائج کرنے کی کوئی بات نہیں کی جس پر جسٹس امیر ہانی مسلم نے کہا کہ اردو کیس کا فیصلہ کچھ روز قبل آیا ہے اس پر عملدرآمد ہونے میں وقت لگے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلہ میں اردو زبان کے ساتھ ساتھ علاقائی زبانوں کی ترویج کی ہدایت بھی کی ہے ۔جسٹس دوست محمد نے کہا کہ اگر کسی نے اردو زبان کے حوالے سے فیصلے پر من و عن عمل نہ کیا تو اس پر توہین عدالت کی درخواست دائر کی جا سکتی ہے۔