اردو یونیورسٹی ‘ سنیارٹی کمیٹی کی تشکیل میں قواعد و ضوابط نظر انداز

15 مارچ 2018

کراچی(نیوز رپورٹر) وفاقی اردو یونیورسٹی میں سینیارٹی کمیٹی کی تشکیل میں قواعد و ضوابط کی دھجیاں اڑا دی گئیں ،جامعہ اردو کے وائس چانسلر سید الطاف حسین نے سینیارٹی کمیٹی کا کنوینرایسے شخص کو بنادیا جو آفیسر ویلفیئر ایسوسی ایشن میں نائب صدر کا عہدہ بھی رکھتے ہیں جس کی وجہ سے ترقیوں کے منتظر لوگوں میں من پسند لوگوں کو ترقی دینے اور سینیارٹی فہرست مشکوک قرار دیے جانے کے خدشے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ وفاقی اردو یونیورسٹی کے شیخ الجامعہ سید الطاف حسین کی منظوری سے کراچی کیمپس کے گریڈ 17اور اس سے اوپر درجے کے افسران کی سینیارٹی فہرست مرتب کرنے کے لیے اسسٹنٹ رجسٹرار ( دفتر رجسٹرار جنرل) محمد رفیق میمن کو کمیٹی کو کنوینر بنایا گیا جبکہ اسسٹنٹ رجسٹرار( دفتر رجسٹرار اکیڈمک ) بشریٰ ارشد ،اسسٹنٹ رجسٹرار ( دفتر رجسٹرار جنرل ) سید دانش علی ، اکاو¿نٹنٹ دفتر آڈٹ نسیم اصغر ،منتظم /نگران کتب خانہ (عبدالحق کیمپس ) محمد اعجاز اراکین میں شامل ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ سینیارٹی کمیٹی کے کنوینر محمد رفیق میمن جامعہ اردو کے آفیسر ویلفیئر ایسوسی ایشن کے نائب صدر بھی ہیں اور جامعہ اردو کے قواعد کے مطابق انتظامی عہدے پر موجود شخص کسی بھی ایسوسی ایشن کا حصہ نہیں بن سکتا اور انتظامی عہدہ رکھنے کے لیے ایسوسی ایشن کے عہدے سے سبکدوش ہونا پڑیگا مگر محمد رفیق میمن ایک جانب یونیورسٹی کے انتظامی عہدے پر تعینات ہیں تو دوسری جانب وہ آفیسر ویلفیئر ایسوسی ایشن کی بھی نمائندگی کر رہے ہیں جبکہ جامعہ اردو کے وائس چانسلر نے محمد رفیق میمن کو سینیارٹی کمیٹی کا کنونیر بنانے کی منظوری دیدی جس کی وجہ سے سینیارٹی کے منتظر افسران میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے اور اس خدشے کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ افسران کی سینیارٹی متاثر ہو سکتی ہے۔ذرائع نے بتایا کہ محمد رفیق میمن منظور نظر افراد کو دوسروں پر فوقیت دے رہے ہیں۔ذرائع نے بتایا کہ سینیارٹی کمیٹی کو 20 سے زائد لوگوں کے نام موصول ہوئے ہیں مگر صرف چند ناموں پر ہی غور کیا جا رہا ہے۔