آئندہ پانچ سال کیلئے سٹرٹیجک ٹریڈ پالیسی فریم ورک کی تیاری شروع کردی گئی

15 فروری 2018

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی) پاکستان نے آئندہ پانچ سال کے لئے سٹرٹیجک ٹریڈ پالیسی فریم ورک کی تیاری شروع کر دی ہے اس سلسلہ میں گزشتہ روز 2018 سے 2023 تک کے سٹرٹیجک ٹریڈ پالیسی فریم ورک کے لئے مشاورتی اجلاس منعقد ہوا جس میں صنعت و تجارت سے تعلق رکھنے والے سٹیک ہولڈرز نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ سیکرٹری تجارت یونس ڈھاگہ نے افتتاحی اجلاس کی صدارت کی۔ سیکرٹری تجارت نے کہا کہ گزشتہ تین سال میں برآمدات پر دباؤ رہا ہے‘ حکومت کے اقدامات سے گزشتہ چند ماہ میں برآمدات بڑھیں گی۔ مذاکرات سے چین اور انڈونیشیا سے مراعات حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔ نئی تجارتی پالیسی میں چھوٹے اور درمیانے درجہ کی صنعتوں اور کاروباری خواتین کو زیادہ مراعات دیں گے۔ تجارتی حلقوں کے نمائندے کریم عزیز ملک نے کہا کہ حکومت کی طرف سے نئی ٹریڈ پالیسی پر مذاکرات بہت خوش آئند ہیں۔ پانچ سال میں برآمدات 25 ارب ڈالر سے کم ہو کر 20 ارب ڈالر پر آ گئی ہیں۔ برآمدات بڑھانے کے لئے پیداواری لاگت کم کی جائے۔ پاکستان کا بجلی کا ٹیرف خطے کے ممالک سے 22 فیصد سے زیادہ ہے‘ برآمدی شعبہ پر ٹیکس کم کئے جائیں۔ چین اور ملایشیا کے ساتھ آزاد تجارتی معاہدے کے باعث تجارتی خسارہ میں اضافہ ہوا۔