برطانوی جنرل کی کاکول پریڈ میں شرکت‘ انٹرا کورٹ اپیل سے متعلق فیصلہ محفوظ

15 فروری 2018

اسلام آباد (وقائع نگار) اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ایم اے کاکول میں آئندہ پاسنگ آٓوٹ پریڈ میں برطانوی جنرل نکولس کی بطور مہمان خصوصی شرکت سے متعلق انٹرا کورٹ اپیل کے قابل سماعت ہونے کے حوالے سے فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔ عدالت عالیہ کے جسٹس اطہر من اللہ اور جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب پر مشتمل ڈویڑن بنچ نے مذکورہ اپیل کی سماعت کی تو کرنل (ر) انعام الرحیم ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ پاکستان آرمی نے برطانوی جنرل کو پی ایم اے کاکول پاسنگ آوٹ پریڈ میں بطور مہمان مدعو کیا ہے۔ نوجوانوں کو مجبور کیا جاتا ہے کہ وہ برٹش جنرل کو سلیوٹ کریں۔ انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ ذمہ داران کے خلاف آفیشل سیکرٹ ایکٹ کے تحت کاروائی کی جائے۔ اس پر جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ ہمارے کیڈٹس سینڈ ہرٹ (برطانیہ) میں بھی ٹریننگ کے لئے بھی تو جاتے ہیں۔ درخواست گزار کرنل (ر) انعام الرحیم نے کہا کہ ہماری اکیڈمی میں بھی دیگر ممالک سے کیڈٹ آتے ہیں ، پاسنگآؤٹ پریڈ پر دیگر ممالک کے ملٹری اتاشی کو بھی پریڈ دیکھنے کی دعوت دی جاتی ہے لیکن بطور چیف گیسٹ صدر ، وزیر اعظم اور وزیر دفاع کا استحقاق ہے کیونکہ قائداعظم سے لے کر آج تک کسی بھی غیر ملکی کو بطور چیف گیسٹ نہیں بلایا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ جنرل نکولس افغانستان میں نیٹو کے کمانڈر رہ چکے ہیں اور سلالہ چیک پوسٹ حملے میں نیٹو کے فوجی ملوث تھے ، جنرل نکولس برطانوی انٹیلی جنس کے انچارج بھی ہیں جو کہ برطانیہ میں فری بلوچستان تحریک کی سرپرستی کر رہی ہے اور اسی ایجنسی نے الطاف حسین کو برطانیہ میں پناہ دے رکھی ہے۔ پی ایم اے کاکول پاسنگ آؤٹ پریڈ میں ان کی بطور مہمان خصوصی شرکت پاکستان کے مفادات کے برعکس اور خلاف روایت ہے۔ بعد ازاں عدالت نے انٹرا کورٹ اپیل کے قابل سماعت ہونے کے حوالے سے فیصلہ محفوظ کر لیا۔

روحانی شادی....

شادی کام ہی روحانی ہے لیکن چھپن چھپائی نے اسے بدنامی بنا دیا ہے۔ مرد جب چاہے ...