جی سکس اور سیون کے گھروں کی جگہ اپارٹمنٹ بناکر الاٹ کرنیکی تجویز زیرغور ہے:طارق فضل

15 فروری 2018

اسلام آباد(نوائے وقت نیوز) قومی اسمبلی کو وزارت کیڈ کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ اسلام آباد کے سیکٹر جی۔6، جی۔7 اور ایف۔ 6 میں سرکاری رہائش گاہوں کی مرمت کے حوالے سے پیش رفت جاری ہے، ان سیکٹروں میں اپارٹمنٹس کی تعمیر کی تجویزبھی زیر غور ہے۔ بدھ کو قومی اسمبلی میں وزیر مملکت ڈاکٹر طارق فضل چوہدری نے کہا کہ یہ بات درست ہے کہ ان گھروں کو تعمیر ہوئے 40 سے 50 سال ہو چکے ہیں، 14904 گھروں اور فیصل مسجد بھی 190 ملین کی گرانٹ سے مرمت ہوتی ہے، رواں سال 306 گھروں کی مرمت کا ہدف مقرر کیا ہے۔ جی سکس اور جی سیون کے گھروں کے مالکانہ حقوق دینے کی 1999ء میں بات کی گئی تھی، بعد میں اس تجویز کو ختم کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ اسلام آباد کا مرکزی علاقہ ہے، متبادل تجویز یہ بھی ہے کہ ان گھروں کی جگہ اپارٹمنٹ بنا کر ان کو مستقل الاٹ کر دیئے جائیں، دونوں تجاویز پر متوازی غور جاری ہے۔ علاوہ ازیں قومی اسمبلی کا اجلاس آج جمعرات کی صبح ساڑھے دس بجے تک ملتوی کر دیا گیا۔ علاوہ ازیں صوبہ سندھ میں لوڈ شیڈنگ اور بجلی کے بقایا جات سمیت دیگر امور پر اراکین پارلیمنٹ کو بریفنگ کے لئے 5 مارچ کو وزیر اعلیٰ ہائوس سندھ میں اجلاس منعقد کیا جائے گا۔ بدھ کو قومی اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران عابد شیر علی نے کہا کہ بجلی چوری، لوڈ شیڈنگ سمیت دیگر معاملات پر اجلاس کی گورنر ہائوس میں پیشکش کی تھی تاہم اس میں اراکین نے دلچسپی نہیں لی، وہ اب بھی یہ پیشکش کرتے ہیںکہ یہ اجلاس وزیر اعلیٰ ہائوس میں طلب کر لیں، میں حاضر ہو جائوں گا۔ سپیکر نے اعجاز جھاکھرانی سے کہا کہ وہ 5 مارچ کو اجلاس کا انتظام کریں اور تمام ممبران کو اس میں طلب کریں اس میں حیسکو اور دیگر کمپنیوں کے سی ای اوز کو بلائیں گے، وہ بریفنگ دیں گے۔کوئٹہ میں دہشت گردی کا نشانہ بننے والے چار سکیورٹی اہلکاروں کے لئے قومی اسمبلی میں دعائے مغفرت کی گئی۔ پاک ترک انٹرنیشنل سکول کی طالبات کے گروپ نے قومی اسمبلی کے اجلاس کی کارروائی دیکھی۔ ایوان میں سپیکر اور ارکان نے ان کا خیر مقدم کیا۔