جماعۃ الدعوۃ‘ فلاح انسانیت فائونڈیشن کے اثاثے ضبط کرنے کی کارروائی شروع

15 فروری 2018

اسلام آباد + لاہور (وقائع نگار خصوصی+سپیشل رپورٹر) وفاقی حکومت نے جماعۃ الدعوہ اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے اثاثے ضبط کرنے کی منظوری دیتے ہوئے صوبائی حکومتوں کو کارروائی کے احکامات جاری کردیئے ہیں۔ وفاقی حکومت کی جانب سے جماعت الدعو اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے منقولہ، غیر منقولہ اور انسانی وسائل پر پابندی لگاتے ہوئے اثاثے منجمد کرنے کی ہدایت کی گئی ہے اور جماعت الدعو اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے اثاثے سرکاری تحویل میں لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت نے تمام صوبوں کو بھی اس حوالے سے اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی ہے۔ اس حوالے سے حکومت پنجاب نے راولپنڈی میں جماعت الدعوۃ کے زیرانتظام مدارس اور صحت کے مراکز کا کنٹرول اپنے ہاتھ میں لینے کی مہم کا آغاز کر دیا۔ مہم کے دوران حکومت پنجاب نے راولپنڈی کے چکری روڈ پر واقع مدرسہ حدیبیہ کا کنٹرول اپنے ہاتھ میں لے کر محکمہ اوقاف کو اس کے انتظامی امور کی ذمہ داری سونپ دی۔ دوسری جانب ضلعی انتظامیہ نے بھی شہر میں موجود جماعت الدعوۃ کے فلاحی ادارے فلاح انسانیت فاؤنڈیشن کے زیر انتظام 4 صحت کے مراکز کا کنٹرول بھی اپنے ہاتھ میں لے لیا۔ وفاقی حکومت نے کمپنیوں اور مخیر حضرات کو بھی جماعت الدعوۃ ایف آئی ایف اور اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل (یو این ایس سی) کی جانب سے جاری کردہ کالعدم تنظیموں کی فہرست میں شامل جماعتوں کو چندہ دینے سے روک دیا۔ راولپنڈی کی ضلعی انتظامیہ کے حکام کا کہنا تھا کہ حکومت نے حدیبیہ مدرسے کی مالی امداد اور اس کے اخراجات کی جانچ کرنے کے لیے اس کا آڈٹ بھی شروع کردیا۔ ضلعی انتظامیہ کے حکام نے بتایا کہ حکومت نے اس کام کو انجام دینے کے لیے پولیس، محکمہ اوقاف اور ضلعی انتظامیہ کے افسران پر مشتمل ایک ٹیم بھی تشکیل دے دی۔ اسی طرح کی کارروائیوں کا آغاز صوبے کے دیگر اضلاع اٹک، چکوال اور جہلم میں بھی کیا جائے گا۔ دوسری طرف جماعۃ الدعوۃ پاکستان کے ترجمان یحییٰ مجاہد نے جماعۃ الدعوۃ اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے اثاثے منجمد کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کرنے پر شدید ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت بھارت و امریکہ کی خوشنودی کیلئے ملک بھر میں ہمارے تعلیمی اداروں، ایمبولینسوں، ڈسپنسریوں اور دیگر اثاثہ جات کو قبضہ میں لے رہی ہے جس سے بلوچستان، سندھ، پنجاب، شمالی علاقہ جات اور کشمیر میں جاری ریلیف سرگرمیاں شدید متاثر ہوئی ہیں اور تعلیم و صحت سمیت دیگر رفاہی و فلاحی منصوبہ جات جاری رکھنا مشکل بنا دیا گیا ہے۔ ہم حکومت پاکستان کے ان غیر قانونی اور غیر آئینی اقدامات کیخلاف بھرپور قانونی جنگ لڑیں گے۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ ماضی میں بھی حافظ محمد سعید و دیگر رہنمائوں کو بلا وجہ نظربند رکھا گیا اور اب ایک مرتبہ پھر اثاثے منجمند کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کر کے پورے ملک میں جماعۃ الدعوۃ اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے جاری رفاہی و فلاحی منصوبہ جات بند کر دئیے گئے ہیں یہ انتہائی مشکل وقت ہے تاہم کارکنان صبر سے کام لیں اور پر امن رہیں ۔ بھارت و امریکہ کا اصل ہدف سی پیک اور پاکستان کا ایٹمی پروگرام ہے۔ وہ بیرونی سازشوں کیخلاف اٹھنے والی ہر آوا ز کو خاموش کرنا چاہتے ہیں۔ نیا صدارتی آرڈیننس صرف جماعۃ الدعوۃ ہی نہیں پورے ملک کیخلاف سازش ہے۔ کسی بھی آزاد اور خودمختار ملک میں ایسے اقدامات نہیںکئے جاتے جو پاکستانی حکمران کر رہے ہیں۔