او آئی سی اجلاس سے مسلم دنیا میں تعلقات‘ اتحاد و یکجہتی کا نیا باب کھلے گا : زرداری

15 اگست 2012
او آئی سی اجلاس سے مسلم دنیا میں تعلقات‘ اتحاد و یکجہتی کا نیا باب کھلے گا : زرداری

مکہ مکرمہ/ جدہ (نوائے وقت رپورٹ+ وقت نیوز+ ایجنسیاں) او آئی سی کاغیرمعمولی اجلاس رات گئے مکہ مکرمہ میں جاری رہا ۔ صدر آصف زرداری نے سعودی جریدے کو انٹرویو میں کہا ہے کہ اس وقت دنیا کو بڑے بڑے چیلنجوں کا سامنا ہے۔ شاہ عبداللہ کی جانب سے چوتھی سربراہی کانفرنس بلانا اہم قدم ہے۔ او آئی سی سربراہ کانفرنس سے مسلم دنیا میں تعلقات اور اتحاد و یکجہتی کا نیا باب کھلے گا۔ پاک سعودی تعلقات قدیم اور مستحکم ہیں۔ پاکستانی عوام خادم الحرمین شریفین کی انسانیت نوازی کو فراموش نہیں کر سکتے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان اور سعودی عرب کا گہرا اسلامی رشتہ ہے، پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات وقت کے ساتھ مضبوط ہو رہے ہیں۔ شاہ عبداللہ کے دل میں پاکستانیوں کیلئے خصوصی محبت ہے۔ دریں اثناءصدر آصف زرداری اور افغان صدر حامد کرزئی نے منگل کو مکہ مکرمہ میں او آئی سی کے غیرمعمولی سربراہ اجلاس کے موقع پر ملاقات کی۔ دونوں رہنماﺅں نے دوطرفہ تعلقات ، علاقائی صورتحال، افغانستان میں امن کے عمل اور باہمی دلچسپی کے معاملات پر تبادلہ خیال کیا۔ صدر آصف زرداری اور بلال بھٹو نے عمرہ ادا کیا، ملکی سلامتی و خوشحالی کے لئے دعائیں مانگیں۔ دریں اثناءحنا ربانی کھر نے کہا ہے کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کا اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کا خواہاں ہے‘ افغانستان میں امن پاکستان کیلئے ضروری ہے‘ میانمار میں مسلمانوں کا قتل عام باعث تشویش ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے او آئی سی کے وزارتی اجلاس کے دوران کہا کہ شام میں عوام کے قتل پر تشویش ہے۔ انہوں نے کہاکہ میانمار میں فیکٹ فائنڈنگ مشن بھیجنے کے فیصلے کی تائید کرتے ہیں۔ ایرانیوزیر خارجہ علی اکبر صالحی نے کہا ہے کہ ایران اسلامی تعاون تنظیم میں شام کی رکنیت کی ممکنہ معطلی کی مخالفت کرتا ہے۔