یوم آزادی جوش و جذبہ سے منایا گیا‘ مقبوضہ کشمیر میں بھی سبز ہلالی پرچم لہرائے گئے

15 اگست 2012
 یوم آزادی جوش و جذبہ سے منایا گیا‘ مقبوضہ کشمیر میں بھی سبز ہلالی پرچم لہرائے گئے

لاہور + اسلام آباد (سٹاف رپورٹر + خصوصی رپورٹر) لاہور اور آزاد کشمیرو گلگت بلتستان سمیت ملک بھر میں منگل کو پاکستان کا 66 واں جشن آزادی قومی جوش و جذبے سے منایا گیا ۔ اس موقع پر صبح یوم آزادی پر وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے سپورٹس کمپلیکس میں 31 توپوں کی سلامی دی گئی جبکہ صوبائی دارالحکومتوں کراچی، لاہور ، پشاور، کوئٹہ اورگلگت بلتستان اور مظفرآباد میں21،21 توپوں کی سلامی دی گئی۔ مساجد میں فجر کی نماز کے بعد ملک کی سلامتی و استحکام اور ترقی اور امن کے لیے خصوصی دعائیں کی گئیں، جبکہ مقبوضہ کشمیر یوم پاکستان کے موقع پر سبز ہلالی پرچم لہرائے گئے اور ملکی استحکام اور سلامتی کیلئے دعا کی گئی۔ دنیا کے کئی دارالحکومتوں میں بھی پرچم کشائی کی تقریبات منعقد کی گئیں۔ وفاقی دارلحکومت میں یوم آزادی کے حوالے سے سب سے بڑی تقریب کنونشن سنٹر اسلام آباد میں منعقد ہوئی جس میں وزیراعظم راجہ پرویز اشرف نے پرچم کشائی کی۔ کراچی میں بابائے قوم قائداعظم کے مزار پر گارڈز کی تبدیلی کی پروقار تقریب ہوئی۔ تینوں مسلح افواج کے نمائندوں نے حاضری دی اور سلامی پیش کی۔ لاہور میں مزار اقبالؒ پر پرچم کشائی کی گئی۔ پشاورمیں یوم آزادی کی مرکزی تقریب پولیس لائنز میں ہوئی۔ وزیراعلیٰ امیرحیدرہوتی نے پولیس شہداء کی یادگار پر پھول رکھے۔ بلوچستان میں جشن آزادی کی مرکزی تقریب ایوب سٹیڈیم کوئٹہ میں ہوئی۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان نے پرچم کشائی کی۔ آزاد کشمیر میں بھی پاکستان کا جشن آزادی جوش و جذبے کے ساتھ منایا گیا۔ دوسری جانب بڑے شہروں کے ساتھ ساتھ چھوٹے شہروں سمیت ملک کے ہر گوشے میں جشن آزادی کے سلسلے میں پرچم کشائی کی تقاریب منعقد کی گئیں۔ لاہور میں دن کا آغاز فورٹریس سٹیڈیم لاہور میں اکیس توپوں کی سلامی سے ہوا جبکہ لاہور ہائیکورٹ، واپڈا ہاﺅس، پنجاب اسمبلی اور دیگر مقامات پر پرچم کشائی کی تقاریب منعقد ہوئیں۔ دوسری جانب مقبوضہ کشمیر میں بھی پاکستان کا 66واں یوم آزادی بھرپور جوش وجذبے اور عقیدت واحترام کےساتھ منایاگیا۔ اس موقع پر پاکستان کی سلامتی واستحکام اور ترقی کےلئے دعائیں مانگی گئیں اور سبز ہلالی پرچم لہرائے گئے ۔ علاوہ ازیں بیرون ملک دنیا کے کئی دارالحکومتوں میں بھی یوم پاکستان بڑے جوش و خروش سے منایا گیا ۔ نئی دہلی میں پاکستان ہائی کمشن میں یوم پاکستان کی تقریب ہائی کمشن میں منعقد ہوئی۔ نئی دہلی میں پاکستان کے ہائی کمشنر سلمان بشیر نے پاکستانی پرچم لہرایا اور اس موقع پر خطاب کیا۔ ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں بھی پاکستان کی آزادی کی 65 ویں سالگرہ منائی گئی۔ انقرہ میں پاکستانی سفارت خانہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر مسٹر ہارون شوکت نے ایک پروقار تقریب میں پاکستانی پرچم لہرایا۔ ادھر کولمبو میں پاکستانی ہائی کمشنر کی عمارت بھی یوم پاکستان کی خصوصی تقریب میں پاکستانی پرچم لہرایا گیا ۔ اس تقریب میں سری لنکا میں موجود پاکستانیوں کی بھی بڑی تعداد موجود تھی۔ لاہور میں بڑی تقریب مینار پاکستان کے سائے تلے منعقد کی گئی جس میں ہزاروں افراد نے شرکت کی۔ مہمان خصوصی سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال اور ڈپٹی سپیکر رانا مشہود احمد خان تھے۔ ڈی جی سپورٹس عثمان انور بھی اس موقع پر موجود تھے۔ پنجاب یوتھ فیسٹیول کی تقریبات 2012ءکے حوالے سے یہ ایک اہم تقریب تھی جس میں 50 سے زائد چھوٹے ریموٹ کنٹرول جہازوں نے مینار پاکستان کی فضامیں مختلف کرتب دکھائے۔ پاکستان تحریک انصاف وویمن ونگ پنجاب کی صدر سلونی بخاری کی قیادت میں وفدنے مزار اقبال پر پھولوں کی چادر چڑھائی۔ متحدہ قومی موومنٹ کے زیر اہتمام یوم آزادی پر ایم کیو ایم پنجاب ہاﺅس میں پرچم لہرانے کی تقریب ہوئی، تحریک استحکام پاکستان کے زیر اہتمام تقریب میں سید علی رضا نے قومی پرچم لہرایا۔ پاکستان ریلوے ہیڈ کوارٹرز میں بھی تقریب ہوئی۔ جنرل مینجر آپریشنز نے پرچم کشائی کی۔ (ق) لیگ پنجاب کی طرف سے مسلم لیگ ہاﺅس میں پرچم کشائی کی تقریب پاکستان زندہ باد، قائداعظم زندہ باد، شجاعت، پرویز الہی زندہ باد کے نعروں سے گونج اٹھی۔ تقریب کے مہمان خصوصی چودھری ظہیر الدین خان تھے۔ ناصر گل، عمرحیات، ثمینہ خاور حیات، آمنہ الفت اور دیگر رہنماﺅں نے بھی شرکت کی۔ پیپلز پارٹی پنجاب آفس لاہور میں پرچم کشائی کی تقریب منعقد ہوئی، امتیاز صفدر وڑائچ، عزیز الرحمن چن نے قومی پرچم لہرایا۔ رہنماﺅں نے کہا کہ یوم پاکستان اس تجدید و عزم کے ساتھ منایا جائے کہ پاکستان کیخلاف سازشوں کو ناکام بنانے کیلئے کسی بھی قسم کی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا۔ یوم آزادی کے موقع پرچیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس عمر عطا بندیال نے ہائی کورٹ کی عمارت پر قومی پرچم لہرایا۔ تقریب کے آخر میں ملکی سلامتی اور خوشحالی کیلئے دعا کی گئی۔ لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسیایشن میں بھی یوم آزادی کے سلسلے میں پرچم کشائی کی تقریب کا انعقاد کیا گیا ۔ حافظ آباد سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق ڈسٹرکٹ کمپلیکس میں جشن آزادی کی مرکزی تقریب ہوئی جس سے خطاب کرتے ہوئے ڈی سی او محمد طف نے کہا کہ آج کے حالات ہم سے یہ تقاضا کرتے ہیں کہ ہم اس ملک کو امن و امان کا گہوارہ بنانے میں اپنا کردار ادا کریں۔ علاوہ ازیں لیبر یونین کے زیر اہتمام جشن آزادی ریلی نکالی گئی جس کی قیادت لیبر یونین کے صدر محمد زمان انصاری نے کی۔ مسلم لیگ یوتھ ونگ حافظ آباد کے زیر اہتمام پرچم کشائی کی تقریب مقامی کالج کے لان میں منعقد ہوئی۔ گوجرانوالہ سے نمائندہ خصوصی کے مطابق گوجرانوالہ اور سیالکوٹ چھاﺅنیوں میں یوم آزادی سادگی اور پرجوش انداز میں منایا گیا۔ کور ہیڈ کوارٹر گوجرانوالہ کینٹ میں ایک خصوصی تقریب سبز ہلالی پرچم لہرایا گیا ۔ مسلم لیگ (ن) سٹی سیکرٹریٹ میں بھی پرچم کشائی کی تقریب ہوئی جس سے خطاب کرتے ہوئے غلام دستگیر خان نے کہا ہے کہ یوم آزادی مسلم لیگ ن کا دن ہے۔ مسلم لیگ ن قائداعظم کے نظریات کی سچی محافظ ہے۔ گیپکو ہیڈ کوارٹرز آفس میں بھی تقریب کا اہتمام کیا گیا ، علاوہ ازیں تحریک انصاف کے زیر اہتمام رتہ روڈ سے ریلی نکالی گئی۔ شیخوپورہ سے نامہ نگار خصوصی کے مطابق بڑی تقریب ضلع کونسل کے سبزہ زار میں ہوئی جہاں ڈی سی او شیخوپورہ سید اسد الرحمن گیلانی نے پرچم کشائی کی اور بعدازاں ضلع کونسل ہال میں ایک تقریب بھی منعقد کی گئی جس میں مختلف سکولوں کے بچوںنے ملی اور قومی نغمے سنائے۔ قصور سے نامہ نگار کے مطابق قصور میں بڑی تقریب ڈی سی اوکمپلیکس میں ہوئی جس میں ڈی سی او قصور محمد احسن وحید اور ڈی پی سید خرم علی شاہ نے پرچم کشائی کرکے تقریبات کا آغاز کیا اس کے بعد پولیس، سول ڈیفنس اور بوائز سکاﺅٹس نے ڈی سی او اور ڈی پی او کو سلامی پیش کی۔ ننکانہ صاحب سے نامہ نگار نمائندہ نوائے وقت کے مطابق مرکزی تقریب آفیسر سپورٹس کلب ننکانہ صاحب میں منعقد ہوئی مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی چودھری محمد برجیس طاہر اور ڈی سی او ننکانہ حسن اقبال نے پرچم کشائی کی اور شہریوں نے بیک زبان ہو کر قومی ترانہ گایا۔ برجیس طاہر نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پاکستان کی خوشحالی کے لئے پوری قوم کو مل کر جدوجہد کرنا ہو گی۔ علاوہ ازیں گوردوارہ جنم استھان ننکانہ صاحب میں سکھ سنگت کے زیر اہتمام پاکستان کی ترقی، خوشحالی کے لئے خصوصی دعائیں مانگی گئیں۔