پرچم کی حرمت

15 اگست 2012

مکرمی!14اگست ” یوم آزادی“ مناتے ہوئے ہم اپنے گھروں،گلیوں، بازاروں، علاقوں، شہروں اور سارے ملک کو سبز ہلالی پرچم سے سجاتے ہیں۔کہیں کپڑے کے جھنڈے لگائے جاتے ہیں اور کہیں کاغذ کی جھنڈیاں۔الغرض ہر طرف جھنڈے ہی جھنڈے لہراتے دکھائی دیتے ہیں جس سے دل فخر سے سرشار ہوجاتا ہے لیکن اگلے رزبہت سارے کاغذ کے جھنڈے بازاروں میں گرے پڑے دکھائی دیتے ہیں اور ان کی وقعت عام کاغذ کی سی رہ جاتی ہے۔یہ انتہائی افسوس ناک بات اور سارے پاکستانیوںکیلئے لمحہ فکریہ ہے۔سارے پاکستانی یاد رکھیں یہ پرچم صرف کپڑے یا کاغذ کا ٹکڑا نہیں بلکہ یہ ہمارے دلوںمیں بسنے والا سبز رنگ ہے جس کی عزت و حرمت ہم سب پر فرض ہے۔یوم آزادی سے اگلے روز ہم سب کا اولین فرض ہے کہ اپنے گلیوں کوچوں بازاروں میں گرنے والے پرچم کو صرف کاغذ کا ٹکڑا نہ سمجھیں بلکہ اسے احترام سے اٹھائیں اور مقدس کاغذات والے ڈبوں میں رکھیں تاکہ اس کی حرمت برقرار رہے۔گلیوں بازاروں کی صفائی پر مامور سرکاری اہلکار بھی خصوصی طورپر جھنڈوں کو علیحدہ رکھیں اور انہیں کوڑے دانوں میں نہ پھینکیں۔ یہی پرچم کی حرمت کا تقاضا ہے اور یہی حب الوطنی کی نشانی۔(محمد انور0321-4632051)

نوٹ کی حرمت

ہم نے کشکول توڑنا اور ایشین ٹائیگر بننا تھا۔ مورکھ مشرف نے آئی ایم ایف سے ...