تھر میں بدستور غذائی قلت ،مزید 10 بچے جاں بحق، رواں سال ہلاکتوں کی تعداد 190ہوگئی

15 اپریل 2018

مٹھی(این این آئی) غذائی قلت اور وائرل انفیکشن کے باعث گزشتہ 24 گھنٹوں میں تھر کے مختلف حصوں سے تعلق رکھنے والے 10 بچے مٹھی کے سول ہسپتال میں دم توڑ گئے۔اس حوالے سے محکمہ صحت کے باخبر ذرائع نے بتایا کہ مٹھی کے سول ہسپتال میں بہتر علاج معالجے کیلئے گاؤں سے آنے والے مزید 10 بچے جاں بحق ہوئے جس کے بعد رواں سال بچوں کی اموات کی تعداد 190 تک پہنچ گئی۔خیال رہے کہ انفیکشن اور غذائی قلت کے باعث جاں بحق ہونے والوں میں ایک سال کا نشاد، 2 سالہ خالدہ، 3 ماہ کا انتظار علی، 4 ماہ کی ماروی، 5 ماہ کی عابدہ، 8 برس کی ماروی، 6 ماہ کی خاتون نامی بچی، 8 ماہ کی عائشہ، 3 ماہ کی دھانا اور 7 ماہ کی شانتی شامل ہیں۔دوسری جانب جاں بحق اور بیمار بچوں کے والدین نے بتایا کہ ان کے علاقوں میں صحت سمیت بنیادی سہولیات موجود نہیں ہے جبکہ ادویات کا بھی فقدان ہے، جس کے باعث انہیں شدید گرمی میں بچوں کے علاج کے لیے کئی کلو میٹر سفر کرنا پڑتا ہے، جس کی وجہ سے بچوں کی طبیعت مزید خراب ہوجاتی ہے اور وہ دوران علاج جاں بحق ہوجاتے ہیں۔اس بارے میں ہیلتھ اینڈ نیوٹریشن ڈویلپمنٹ سوسائٹی ( ہینڈز) کے ڈاکٹر شیخ تنویر احمد سمیت صحت اور غذائیت کے ماہرین نے حکومت پر زور دیا کہ وہ تھر میں اس طرح کی اموات کا نوٹس لیں اور وہاں صحت کی سہولیات پہنچانے میں کردار ادا کریں۔نجی ٹی وی کے مطابق تھر میں غذائی قلت کے باعث متعدد اموات اور اس ہنگامی صورتحال پر جب محکمہ صحت کے مقامی حکام سے رابطہ کیا گیا تو کسی نے کوئی جواب نہیں دیا۔