فلسطینیوں کو جہاں جہاں سے نکالا گیا انہیں وہاں آباد ہونے کا حق ہے: عیسائی رہنما

15 اپریل 2018

بیت لحم (صباح نیوز)فلسطین کے ایک سرکردہ عیسائی مذہبی رہنما اور اسلامی مسیحی مقدسات کے دفاع کے لیے قائم کردہ فلسطینی کمیٹی کے رکن عمانویل مسلم نے فلسطینی قوم کی حق واپسی کے لیے جاری تحریک کی مکمل حمایت کا اعلان کرتے ہوئے کہ فلسطینیوں کی حق واپسی کی تحریک میں فلسطین کی عیسائی اور مسلمان برادری ایک صف میں کھڑی ہیں،مسلح مزاحمت آزادی فلسطین کی آخری امید ہے۔ مرکزاطلاعات فلسطین کو دیے گئے ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ فلسطینی قوم کے پاس اپنے سلب شدہ حقوق کے حصول کے لیے مسلح مزاحمت کے سوا کوئی چارہ باقی نہیں بچا ہے۔ مسلح مزاحمت ہی فلسطینی قوم کی امیدوں کا آخری سہارا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر فلسطینی حق واپسی کے لیے مزاحمت، بات چیت اور اس کے ساتھ وابستگی ترک کریں گے تو ان کا یہ دیرینہ حق ان سے چھین لیا جائے گا۔غزہ میں قائم اللاتین چرچ کے سابق بشپ نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ فلسطینیوں کی عظیم الشان حق واپسی تحریک امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی فلسطین کے خلاف سازشوں کا جواب اور ٹرمپ کے منہ پر طمانچہ ہے۔انہوں نے کہا کہ فلسطینی قوم کوئی نئی تحریک شروع نہیں کررہی ہے بلکہ فلسطینی 70 سال سے اپنے حقوق کے لیے جدوجہد کررہے اور جنگ لڑ رہے ہیں۔