شام پر حملہ، پاکستان ایٹمی قوت، سوچ بچار کر کے ردعمل دینا چاہئے: شیری رحمن

15 اپریل 2018

اسلام آباد/ رنگپور (آن لائن+ صباح نیوز+ نامہ نگار) سینٹ مین اپوزیشن لیڈر شیری رحمان نے کہا ہے کہ بڑی قوتوں کے درمیان سرد جنگ میں شام کی سرزمین انکی نسلوں اور مسلمانوں کے دیرینہ ورثے پر تباہ کاریاں برسائی جا رہی ہیں۔ پاکستان ایک ایٹمی قوت کی حیثیت سے سوچ و بچار کے بعد ردعمل دینا چاہئے۔ شام میں امریکی حملے پر ردعمل دیتے ہوئے شیری رحمان نے کہا کہ اقوام متحدہ پہلے ہی اپنے بیان میں کہہ چکی ہے کہ شام میں امن لانے کے لئے تمام قوتیں اپنا کردار ادا کرنا چاہئے۔ علاوہ ازیں تباہ حال شام پر عالمی طاقتوں کا حملہ کھلی جارحیت ہے، یہ حملہ بین الاقوامی قوانین کے خلاف اورایک ملک کی سالمیت پر حملہ ہے۔ عراق کی کہانی ایک مرتبہ پھر سے دہرائی جارہی ہے۔ او آئی سی خود جارح قوتوں کی آلہ کار بن چکی ہے۔ شام پر حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار سربراہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے تین عالمی طاقتوں کے میزائل حملے کے خلاف ایک بیان میں کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ پورا عرب جنگ کی لپٹ میں ہے جس پراو آئی سی کی خاموشی مجرمانہ ہے۔ رنگپور سے نامہ نگار کے مطابق متحدہ مجلس عمل پاکستان کے رہنماء اور ملت جعفریہ کے قائد علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا ہے کہ امت مسلمہ متحد ہو کر اسلام دشمن عناصر کی سازشوں کو ناکام بنائے ، مسلمانوں میں فرقہ بازی اور نفرت کی فضا قائم کرنے والے عناصر کو ہر سطح پر ناکامی ہوئی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے زہرا اکیڈمی کراچی کے زیر اہتمام امام بارگاہ صاحب الزماں میں 34 غریب جوڑوں کی اجتماعی شادی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ غریبوں کی مدد اور انکو بنیادی سہولیات کی فراہمی خدمت خلق کی اعلیٰ قسم ہے۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ مجلس عمل آئندہ عام انتخابات میں متفقہ امیدوار کھڑے کرے گی جو اتحاد بین المسلمین میں اہم کردار ادا کریں گے۔

نفس کا امتحان

جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف خواتین کی مہم ’می ٹو‘ کا آغاز اکتوبر دو ...