گر دش ِ شب

15 اپریل 2018

خدا کرے کہ کبھی مجھ سے کچھ کمال بھی ہو
دلنشیں خواب ہو گر، خاہش ِ جمال بھی ہو
میں غزل شب میں کہوں چاندنی کا پہلوسجے
شمع ِ دل بھی جلے ، جاویداں خیال بھی ہو
یاد کی ندیا حسیں میری کیفیت چ±ھو
حال ِدل اتنا بہے , نغمگی بحال بھی ہو
گردش ِ شب کے پہر شب ِ ہجراں ٹوٹے
مری خاموشی کھلےِ یوں کہ لازوال بھی ہو
کوچہِ یار کبھی بے کسی کا بار سہے
ایسا لمحہ¿ اثر بے طرح م±حال بھی ہو