ننکانہ: سینکڑوں افراد کا کروڑوں وصول کرنے والے سنار کے گھر کا گھیرائو، چل بسا

14 اکتوبر 2016

ننکانہ صاحب(نامہ نگار)کاروبار کی آڑ اور زیادہ منافع دینے کا لالچ دیکر درجنوں افراد سے کروڑوں روپے وصول کرنے والا زرگر ناظم علی عرف بھولا سنیارا کے گھر پر رقوم لینے والوں کا گھیرائو ، حالت خراب ہونے پر ریسکیو1122 کی ٹیم اسے ہسپتال پہنچانے کے لئے موقعہ پر پہنچی مگر درجنوں قرض خواہوں اور ان کے سینکڑوں ساتھیوں نے اسے کئی گھنٹے تک محبوس رکھا اور اسے ہسپتال نہ لیجانے دیا گیا ، پولیس کی مداخلت پر اسے ہسپتال بھجوایا گیا مگر وہ راستہ میں ہی دم توڑ گیا۔ تفصیلات کے مطابق متوفی کے بھائی محمد عظیم نے پولیس تھانہ سٹی ننکانہ صاحب میں درج کرائی گئی ایف آئی آر میں الزام عائد کیا ہے کہ میرے بھائی ناظم علی عرف بھولا سنیارا کا ملزمان خالد عرف طوطی، خادم حسین، آصف، محمد امجد، محمد انور، پپو، رائے اعجاز، ماسٹر گلزار، احسان رحمانی، زبیر اشرف ودیگر کے ساتھ کاروباری لین دین کا معاملہ چل رہا تھا ملزمان کے خوف سے میرے بھائی کے دونوں بیٹے بلال اور شعیب ننکانہ چھوڑ کر نامعلوم مقام پر چلے گئے میرے بھائی ناظم عرف بھولا کے گھر میں اس کی معذور بیوی اور بہو موجود تھی، 11اکتوبر کو میں اپنے بھائی کے ڈائیلاسز کروانے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ننکانہ صاحب گیا جہاں ملزمان انہیں جان سے ماردینے کی دھمکیاں دیں ڈائیلاسز کروانے کے بعد جب میں اپنے بھائی ناظم علی کواس کے گھر گلی امام بارگاہ میں آیا تو وہاں پرخالد وغیرہ 17ملزمان موجود تھے گھر کا دورازہ کھلتے ہی ملزمان اندر داخل ہوگئے اور گھر پر قبضہ کر لیا 12اکتوبر کو تقریبا 11بجے دن میرے بھائی ناظم عرف بھولا کی طبیعت زیادہ خراب ہوئی تو میں نے ریسکیو1122 کو فون کیا جہاں انہیں لینے ایمبولینس آگئی مگر ملزمان نے جو کہ اسلحہ سے مسلح تھے میرے بیمار بھائی کو ہسپتال شفٹ نہ کرنے دیا ملزمان نے میرے بھائی پر تشدد بھی کیا اور اسے واش روم میںجانے پر دھکادیدیا جس سے وہ بیہوش ہوگیا 15اور پولیس کو اطلاع دی گئی جس پر پولیس موقعہ پر آگئی اور انہوں نے بڑی مشکل سے مداخلت کرکے میرے بھائی کو بڑی مشکل سے ہسپتال بھجوایا جو راستہ میں ہی دم توڑ گیا۔