بھارت : گائے کا گوشت کھانے کا الزام‘ ایک اور مسلمان نوجوان قتل‘ ....

14 اکتوبر 2016

نئی دہلی (آئی این پی + اے پی پی) بھارتی ریاست جھاڑکنڈ میں ہندوانتہاپسندوں نے گائے کا گوشت کھانے کے الزام میں ایک اور مسلمان نوجوان کو قتل کر دیا گیا۔ گجرات میں انتہا پسندوں کے مظالم سے تنگ آ کر 200 دلتوں نے بدھ مت قبول کر لیا۔ پولیس نے جامتارا ڈسٹرکٹ کے نوجوان منہاج انصاری پر 2اکتوبر کو گائے کا گوشت کھانے سے متعلق موبائل پیغام بھیجنے کا الزام لگایا اور تھانے میں لے جاکر بدترین تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔تین اکتوبر کو گرفتار کئے گئے نوجوان کے والد عمر انصاری کے مطابق ان کے بیٹے پر دو روز تک تشدد کیا گیا، جس کے بعد سے اسے آر آئی ایم ایس میں منتقل کردیا گیا۔ دوسری جانب بھارت میں نچلی ذات کے ہندوو¿ں نے انتہا پسندوں کے مظالم سے تنگ آکر مذہب تبدیل کرنا شروع کر دیا، گجرات میں سینکڑوں دلتوں نے بدھ مت قبول کر لیا۔ ضلع احمد آباد میں منعقدہ تقریب میں بدھ مت قبول کرنیوالے دلتوں نے ہندو انتہا پسندوں کیخلاف دل کی خوب بھڑاس نکالی۔ انھوں نے کہا کہ ہندو دھرم میں انھیں ہمیشہ نسلی تعصب اور نفرت کا سامنا کرنا پڑا۔ ان کے بچوں کو تعلیم سے محروم رکھا گیا جبکہ سرکاری ملازمتوں کے دروازے بھی ان پر بند کر دئیے گئے۔ آئندہ چند روز میں مزید کئی سو دلتوں کی جانب سے ہندو دھرم چھوڑ کر بدھ مت قبول کرنے کا امکان ہے۔ بھارت میں انتہا پسند مودی سرکار کی آمد کے بعد سے مسلمانوں، سکھوں اورعیسائیوں سمیت سب اقلیتوں کی زندگی اجیرن ہو چکی ہے۔
مسلمان قتل/ دلت بدھ مذہب