بلدیاتی انتخابات سے جمہوریت کی تکمیل ہوگی‘ مہناز رحمن

14 نومبر 2013

کراچی ( لیڈی رپورٹر ) بلدیاتی انتخابات سے جمہوریت کی تکمیل ہوگی۔ انعقاد یقینی بنایا جائے ۔ عدلیہ کے انتخابات کے متعلق موجودہ فیصلے خوش آئند ہیں اب حکومت نے روگردانی کی تو سول سوسائٹی بھی تحریک چلائے گی۔ عورت فاﺅنڈیشن کی ڈائریکٹر مہناز رحمن نے یہ باتیں نوائے وقت سے گفتگو کرتے ہوئے کہیں ۔ انہوں نے کہا بلدیاتی الیکشن سے خواتین کو مقامی سطح کی سیاست میںشرکت کا موقع ملتا ہے گزشتہ بلدیاتی انتخابات 2009 کے نتیجے میں چالیس ہزار خواتین پاکستان بھر سے منتخب ہوئیں۔ انہوں نے عوامی مسائل کے حل کے لئے بہت کام کیا۔ مہناز رحمن نے کہا جمہوریت وفاقی‘ صوبائی اور مقامی سطح کے دائرے پر مبنی ہے۔ مقامی سطح کے انتخابات کے بغیر جمہوریت کا دائرہ مکمل نہیں ہوتا۔ مگر بدقسمتی سے پاکستان میں منتخب حکومتیں ہمیشہ مقامی سطح کے انتخابات سے گریز کرتی ہیں اور فوجی آمر ہی ان کا انعقاد کرتے ہیں۔ مہناز رحمن نے کہا کہ ضیا ءالحق کے دور میںوفاقی اور صوبائی اراکین اسمبلی کے لئے ترقیاتی فنڈز مختص کرنے سے غلط روایت کا آغاز ہوا۔ ممبران اسمبلی کا کام قانون سازی ہے۔ ان کے ترقیاتی فنڈز عوام تک پہنچنے کی بجائے کرپشن کی نذر ہوجاتے ہیں یہ بات مختلف رپورٹیں بھی ثابت کر چکی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سیاستدانوں کو عدم تحفظ اور مفاد پرستی کا شکار ہونے کے بجائے عوامی نمائندگی کا ثبوت دینا چاہئے اور اختیارات کی نچلی سطح تک منتقلی کے لئے بلدیاتی انتخابات یقینی بنانے چاہئیں کیوں کہ اسی طرح عوام کے مسائل حل ہو سکتے ہیں ۔ مہناز رحمن نے کہا کہ 2009 کے بلدیاتی انتخابات میں خواتین کی نمائندہ 33فیصد تھی جسے کم کر کے 22 فیصد کردیا گیا ہے۔ خواتین کونسلرز نے کام کے ذریعے اپنی اہلیت ثابت کی انہیں دوبارہ یہ موقع ملنا چاہئے۔ 

شیریں نوا مہناز

شاہد لطیف 1968 اور 1969 کا زمانہ تھا راقِم ریڈیوپاکستان کراچی کے موسیقی کے ...