آئین اور قانون میں کسی شہری سے جبری مشقت لینے کی گنجائش نہیں: ہائیکورٹ

14 نومبر 2013

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کی جسٹس عالیہ نیلم نے بچوں اور خواتین سمیت 30 بھٹہ مزدورں کو بازیاب کرا کے رہا کر دیا۔ فاضل عدالت نے قرار دیا کہ آئین اور قانون میں کسی شہری سے جبری مشقت لینے کی کوئی گنجائش نہیں۔ لاہور ہائیکورٹ میں گذشتہ روز کیس کی سماعت کا آغاز ہوا تو درخواست گذار ناصرعباس نے مؤقف اختیار کیا کہ ضلع سرگودھا کے بھٹہ مالک چودھری حامد نے بھٹہ مزدوروں کو قید میں رکھا ہوا ہے، ان سے دن رات زبردستی محنت کرائی جاتی ہے اور مزدوری مانگی جائے تو ظلم و ستم کے پہاڑ توڑے جاتے ہیں لہٰذا فاضل عدالت بھٹہ مزدوروں کو بازیاب کرا کے رہا کرے۔ فاضل عدالت کے حکم پر بھٹہ مالک کی قید میں سے باز یاب کروائے گئے بچوں و خواتین سمیت 30 افراد کو رہا کر دیا۔