فلپائن: طوفان متاثرین کی خوراک کیلئے دھکم پیل، دیوار گرنے سے 8 ہلاک

14 نومبر 2013

منیلا (آن لائن+ اے ایف پی + بی بی سی) فلپائن کے سمندری طوفان سے متاثرہ علاقے النگ الانگ قصبے میں دھکم پیل سے چاول سٹور کی دیوار گرنے سے 8 افراد ہلاک ہوگئے۔ حکام کے مطابق مسلح افراد نے فائرنگ کرکے ٹرک میں ڈالی گئی نعشوں کو دفنانے نہیں دیا۔ نعشوں سے تعفن پھیلنے لگا۔ ادھر تباہی سے دوچار جزائر میں زندہ بچ جانے والوں نے لوٹ مار شروع کردی۔ فلپائنی صدر نے کہا طوفان سے 10 ہزار نہیں اڑھائی ہزار افراد مارے گئے ہیں۔ 29 قصبے ایسے ہیں جہاں ابھی تک رسائی ممکن نہیں ہوسکی۔ کویت نے 10 ملین ڈالر امداد دینے کا اعلان کیا ہے۔ فلپائن میں ایک کانگریس مین نے خبر دار کیا ہے کہ فلپائن کے طوفان زدہ علاقوں میں لوگ خوراک، پانی اور طبی سازو سامان کے لئے بے صبر ہوتے جارہے ہیں۔ جب ایک ہزاروں افراد پر مشتمل ہجوم نے خوراک کے گودام پر ہلہ بول دیا۔ نیشنل فوڈ اتھارٹی کے ترجمان نے کہا کہ پولیس اور سپاہی لوٹ مار کرنے والوں کو روکنے میں ناکام رہے۔ جنہوں نے لیتے کے ایک شہر الانگالنگ کے ایک سرکاری گودام سے چاول کی ایک لاکھ بوریاں لوٹ لیں۔ حکومت نے 1800 ہلاکتوں کی تصدیق کردی۔ ملک میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے نیشنل ڈیزاسٹر اینڈ رسک مینجمنٹ کونسل نے منگل کو بتایا کہ ہیان طوفان سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 1798 تک پہنچ چکی ہے جبکہ 2582 زخمی اور 82 افراد لاپتہ ہیں۔ ادارے کے حکام کے مطابق طوفان سے 80 ہزار مکانات تباہ جبکہ تقریباً چھ لاکھ افراد بے گھر ہوگئے ہیں۔