80 ارب روپے کے ضیاع کا ذمہ وار کون؟

14 جولائی 2009
مکرمی! ایک خبر کے مطابق کالا باغ ڈیم کی فزیبیلیٹی رپورٹ اور دیگر تیاریوں پر 80 ارب روپے کا بھاری سرمایہ خرچ ہو چکا ہے۔ اس عظیم منصوبے پر عمل کیا جاتا تو شاید اب تک لوڈشیڈنگ پر بھی قابو پایا جا چکا ہوتا یہ اتنی بڑی رقم اس غریب قوم کے خون پسینہ کی کمائی ہے۔ لہذا ان کے طبقے کا کوئی فرد کروڑوں اربوں روپے قرض لے کر معاف کرا لیتا ہے تو یہ لوگ خود یاد رکھتے ہیں کہ کل کلاں تو وہ بھی استفادہ کر سکتے ہیں۔ میری جناب صدر سے اپیل ہے کہ کالاباغ ڈیم کے منصوبے پر رقم کے ضیاع کا فوری ایکشن لیں اور عدلیہ کے ریٹائرڈ جج صاحبان جن کا تعلق چاروں صوبوں سے ہو ایک کمیشن تشکیل دیا جائے جو اس منصوبے پر رپورٹ مرتب کریں اگر منصوبہ قابل عمل ہوا تو فوراً کسی کی پرواہ کئے بغیر شروع کرایا جائے اگر نہیں تو منصوبہ سازوں سے 80 ارب وصول کئے جائیں۔(محمد یوسف جنجوعہ سابق کونسلر بلدیہ الہ آباد (وزیر آباد)