لاہور ہائیکورٹ کے حکم پر سٹی ٹریفک پولیس کا18 سال سے کم عمر ڈرائیور ز کیخلاف آپریشن شروع

Sep 12, 2018 | 19:45

ویب ڈیسک

چیف ٹریفک آفیسر لاہور کیپٹن(ر)لیاقت علی ملک نے عدالتی احکامات پر عملدآمد یقینی بنانے کیلئے ایس پی ٹریفک صدرڈویژن سردارمحمد آصف خاں،ایس پی ٹریفک سٹی ڈویژن آصف صدیق اور تمام ڈی ایس پیز صاحبان کو ہدایات جار ی کر دی ہیں،عدالتی احکامات کی روشنی میں سٹی ٹریفک پولیس18 سال سے کم عمر ڈرائیور ز اور رکشوں میں مقررہ تعداد سے زائد سواریاں بٹھانے والوں کے خلاف گرینڈ آپریشن شروع کر دیا ہے۔ان اقدامات کا فیصلہ حادثات کی روک تھام اورشہریوں کے محفوظ سفر کویقینی بنانے کیلئے کیا گیا ہے۔سی ٹی او کیپٹن(ر)لیاقت علی ملک کا کہنا تھاکہ18سال سے کم عمر ڈرائیونگ پر موٹر سائیکل، گاڑی،رکشہ سمیت ہر قسم کی سواری کو بند کردیا جائیگااور والدین کی طرف سے کم عمر بچوں کی جانب سے ڈرائیورنگ نہ کرنے کے حوالے سے ضمانتی مچلکہ جمع کروانے کے بعد وہیکل کو چھوڑا جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ تمام افسران کو یہ ہدایت بھی کی گئی ہے کہ پہلی بار والدین کے کہنے پر چھوڑنے کے بعد دوسری بار غلطی کرنے پر بچوں کے والدین کے خلاف بھی کارروائی ہو گی۔ ان کا مزید کہنا تھاکہ اگر شہر میں حادثات کی شرح دیکھی جائے تو سب سے زیادہ حادثات کم عمر ڈرائیورز کی نا تجربہ کاری سے پیش آتے ہیں۔روڈ سیفٹی آفیسرز اور ایجوکیشن یونٹ کے افسران کو فوری طور پر تعلیمی اداروں اور اکیڈمیز میں آگاہی لیکچرز اور پمفلٹس تقسیم کرنے کی ہدایت کی گئی ہے ،سٹی ٹریفک پولیس شہر کے مختلف تعلیمی اداروں میں جاکر کم عمرڈرائیورز کی حوصلہ شکنی کیلئے لیکچرز اور آگاہی پمفلٹس تقسیم کرے گی ۔ کم عمر ڈرائیونگ کے خلاف مہم میں سب سے اہم کردار والدین کا ہے اگر والدین 18 سال سے کم عمر بچوں کو موٹر سائیکل اور گاڑی چلانے کی اجازت نہ دیں تو بچوں میں قانون پسندی کی بنیاد رکھی جاسکتی ہے اور بہترین معاشرہ تشکیل پا سکتا ہے۔انہوں نے والدین سے اپیل کی کہ وہ اپنے بچوں پر خصوصی نظر رکھیں، نوجوان نسل ملک وقوم کا قیمتی اثاثہ ہیں اس لئے انہیں حادثات کی نذر نہ ہونے دیا جائیگا ۔

مزیدخبریں