روسی تاریخ کی سب سے بڑی جنگی مشقیں شروع، چین کی بھی شرکت

Sep 12, 2018

ماسکو(این این آئی، اے ایف پی) روس کی تاریخ کی سب سے بڑی فوجی مشقوں کا آغاز ہوگیا،غیرملکی خبر ایجنسی کے مطابق ووسٹوک 2018نامی جنگی مشقیں سائبیریا کے جنوبی حصے میں کی جارہی ہیں جس میں چین اور منگولیا کے فوجی دستوں سمیت 3 لاکھ فوجی اہلکار حصہ لے رہے ہیں۔ایک ہفتے تک جاری رہنے والی جنگی مشقوں میں 36 ہزار فوجی گاڑیاں، ایک ہزار طیارے اور 80 جنگی جہاز حصہ لیں گے جب کہ روسی صدر ولادی میر پیوٹن بھی ووسٹوک مشقوں کا جائزہ لیں گے۔روسی وزیر دفاع سرگوئے شوئگے کا کہناتھا کہ تین لاکھ فوجی، 36 ہزار فوجی گاڑیاں، ایک ہزار جہاز اور 80 جنگی بیڑے مشقوں کا حصہ ہوں گے۔ان مشقوں کا مقصد کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لیے ہمہ وقت تیار رہنا ہے۔روس نے اس سے قبل 'ووسٹوک 2014' کے نام سے فوجی مشقیں کی تھیں جس میں ایک لاکھ 55 ہزار اہلکاروں نے شرکت کی تھی۔

مزیدخبریں