بیگم کلثوم نواز انتقال کرگئیں

Sep 12, 2018

لاہور/ لندن (خصوصی رپورٹر+ عارف چودھری+ ایجنسیاں+ نوائے وقت رپورٹ) سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز لگ بھگ ایک سال 25 دن تک گلے کے کینسر کے موذی مرض سے بہادری کے ساتھ پنجہ آزمائی کرتے ہوئے بالآخر موت کے سامنے ہار گئیں اور خالق حقیقی سے جا ملیں، ان کی عمر 68 سال تھی۔ انا للہ وانا الیہ راجعون۔ بیگم کلثوم نواز کا کینسر کا علاج جاری تھا۔ جمعرات کو انہیں دل کا دورہ پڑا جس سے ان کی حالت مزید بگڑ گئی، ڈاکٹروں نے انہیں وینٹی لیٹر پر ڈال دیا۔ موت سے جنگ لڑتی بہادر خاتون بیگم کلثوم نواز بالآخر ہار گئیں اور لندن کے ہارلے سٹریٹ کلینک میں خالق حقیقی سے جا ملیں۔ اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے کہا ہے کہ کلثوم نواز کی میت پاکستان لا رہے ہیں۔ پہلی فلائٹ سے لندن جارہا ہوں۔ خاندانی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ بیگم کلثوم نواز کی میت پاکستان لانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اس سے قبل کلثوم نواز کی نماز جنازہ لندن میں ریجنٹ پارک میں ادا کی جائے گی۔ خاندانی ذرائع کے مطابق کلثوم نواز کی تدفین جمعہ کو جاتی امرا لاہور میں ہوگی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ محترمہ کلثوم نواز کی فیملی کو قانون کے مطابق تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ لندن میں پاکستان ہائی کمشن کو ہر طرح سے تعاون فراہم کرنے کی ہدایت کردی گئی ہے۔ ہارلے کلینک سے ڈیتھ سرٹیفکیٹ جاری کردیا گیا جس کے بعد بیگم کلثوم نواز کی میت کو ریجنٹ پارک سرد خانے منتقل کردیا گیا۔ وزیراعظم کی ہدایت پر پاکستانی ہائی کمشن کا عملہ ہارلے سٹریٹ پہنچ گیا۔ عملہ شریف خاندان کی میت پاکستان منتقلی میں معاونت کرے گا۔ سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف کی اہلیہ کلثوم نواز کی وفات پر سوگ کے لئے مسلم لیگ ن نے اپنی سیاسی سرگرمیاں تین روز کے لئے معطل کرنے کا اعلان کیا ہے۔ گزشتہ روز مسلم لیگ ن لاہور کے جنرل سیکرٹری خواجہ عمران نذیر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بیگم کلثوم نواز ایک نڈر خاتون تھیں اور انہوں نے ملکی سیاست میں اہم کردار ادا کیا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بیگم کلثوم نواز کی میت پاکستان لانے میں دو تین دن لگ سکتے ہیں۔ کلثوم نواز کی موت پر لیگی کارکن غم سے نڈھال رہے اور دھاڑیں مار کر روتے رہے۔ جب کہ شریف فیملی کے عزیزاقارب، لیگی کارکنون اور رہنمائوں کی بڑی تعداد جاتی امرا پہنچنا شروع ہو گئی۔ اہم شخصیات کی آمد کے پیش نظر سکیورٹی سخت کر دی گئی۔ بیگم کلثوم نوا ز شریف کو لاہور میں ان کی رہائش گاہ جاتی امرا میں میاں شریف کے پہلو میں دفن کیا جائے گا۔ مسلم لیگ ن کی رہنما عظمی بخاری نے اور رانا ثنانے جاری کردہ بیان میں بتایا بیگم کلثوم نواز نفیس خاتون تھیں جبکہ بہت سے لو گوں کوکلثوم نوازکی وفات پر یقین آ گیا ہو گا۔ رانا ثنا نے کہا بیگم کلثوم نواز کی تدفین جاتی امرا رائے ونڈ میں ہو گی۔ حسین اور حسن نواز پاکستان آتے ہیں یا نہیں یہ فیصلہ وہ خود کریں گے۔صفدرآباد سے نامہ نگار کے مطابق بیگم کلثوم نواز کے انتقال کی خبر جنگل میں آگ کی طرح پھیل گئی اور مسلم لیگی ایک دوسرے سے اظہار تعزیت کرتے رہے۔

مزیدخبریں