مقبوضہ کشمیر میں مظاہرے‘ جھڑپیں‘ پتھراﺅ‘ کئی علاقوں میں غیر اعلانیہ کرفیو

12 مارچ 2013
مقبوضہ کشمیر میں مظاہرے‘ جھڑپیں‘ پتھراﺅ‘ کئی علاقوں میں غیر اعلانیہ کرفیو

سرینگر (کے پی آئی )کشمےری نوجوان محمد افضل گورو کو پھانسی دیئے جانے اور بھارتی شہرحیدر آباد میں کشمےری سکالر مدثر کامران کے ماورائے عدالت قتل کےخلاف مقبوضہ کشمےر بھر مےں احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ پےر کی صبح سری نگر میں نوجوان سڑکوں پر نکل آئے اور پولیس کی طرف سے چھاپوں اور گرفتاریوں کےخلاف مظاہرے کئے۔ مظاہرین اسلام اور آزادی کے حق میں نعرے لگا رہے تھے۔ پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کی کوشش کی جس پر نوجوان مشتعل ہوگئے اور انہوں نے فورسز پر پتھراﺅ شروع کیا ۔پائین شہر کے کاوڈارہ ،گوجوارہ اور دیگر مقامات پر بھی پتھراﺅ کے واقعات پیش آئے جس کے نتیجے میں علاقے میں کاروبار زندگی میں رخنہ پڑا۔ قصبہ بارہمولہ میں پر تشدد جھڑپوں کے بعد انتظامیہ نے احتجاجی مظاہروں کے پیش نظر غیر اعلانیہ کرفیو نافذ کیا جس کے دوران سخت ترین سکےورٹی کے انتظامات کئے گئے تھے۔ قصبہ کی تمام چھوٹی بڑی سڑکوں ،گلی کوچوں اور پلوں کو خار دار تاروں سے مکمل طور پر سیل کردیا اور لوگوں کی نقل وحر کت کو محدود رکھا گیا۔اولڈ ٹاﺅن میں خاص طور پر احتجاجیوں کی نقل وحرکت کو روکنے کیلئے خادن یار سے لیکر سٹیڈیم کالونی تک خار دار تاروں سے مکمل طور سیل کردیا تھا۔ قصبہ میں مسلسل 7ویں روز غیر اعلانیہ کرفیو اور سخت ترین پابندیوںکے باعث ہزاروں نفوس پر مشتمل آبادی گھروںمیں محصور ہوکر رہ گئی تاہم اتوار کو قصبہ بارہمولہ میں کوئی بھی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا ۔ پلہالن پٹن میں کچھ نوجوانوں نے سڑکوں پر احتجاجی مظاہرے کرنے کی کوشش کی تاہم فورسز نے ان کا تعاقب کر کے منتشر کردیا لیکن پتھراﺅ کے نتیجے میں پلہالن پٹن میں کاروباری نظام بند رہا۔سوپور میں سیلو اور سنگرامہ میں ممکنہ احتجاجی مظاہروں کے پیش نظر اعلانیہ کرفیو نافذ کیا گیا تھا جس کے نتیجے میںیہاں بھی ہو کا عالم دیکھنے کو ملا ۔ معلوم ہوا ہے کہ سیلو میں چھاپہ مار کارروائی کے دوران پولیس و فورسز نے 4 افراد کو سنگبازی کے الزام میں گرفتار کیا۔چھانہ کھن علاقے میں بھی نوجوانوں نے مظاہرے کئے۔ سرحد ی ضلع کپواڑہ میں غیر اعلانیہ کرفیو بدستور جاری رہا۔ فورسز اہلکاروں نے مظاہرین پر طاقت کا استعمال کر کے لاٹھی چارج اور آنسو گیس کی شیلنگ کی جس کے نتیجے میں حاجی غلام نبی بٹ کی آنکھ بری طرح خراب ہوگئی۔لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ فورسز نے لال پورہ کے شالہ گنڈ، تیلوان پورہ اور مندل پورہ کی کی بستیوں میں گھس کر مکانوں کی۔ توڑ پھوڑ کی لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ وہ گزشتہ دو دنوں سے اپنے گھروں میں ہی محصور ہو کر رہ گئے ہیں ۔