نگران وزیر اعظم کی تقرری ‘چوہے بلی کا کھیل یا کچھ اور

12 مارچ 2013

قومی اسمبلی اور سےنےٹ کے اجلاس دو دن کے وقفے کے پےر کی شام کو ہوئے ارکان قومی اسمبلی کی اےوان کی کارروائی مےں عدم دلچسپی کا ےہ عالم ہے۔ اجلاس دو گھنٹے کی تاخےر سے شروع ہوا۔ بادامی باغ لاہور کے واقعہ کے خلاف متحدہ قومی موومنٹ کے سینیٹرز نے احتجاجاً واک آﺅٹ کر دےا۔قائد حزب اختلاف چوہدری نثار جنہوں نے پچھلے ہفتہ عشرہ سے لاہور مےں ڈےرے ڈال رکھے تھے جب وہ سےاسی جوڑ توڑ سے فارغ ہوئے تو پارلےمنٹ مےں واپس آگئے ان کی واپسی سے مسلم لےگی ارکان مےں ہلچل مچ گئی جب وہ پارلےمنٹ ہاﺅس پہنچے تو اخبارنوےس ان سے وزےر اعظم کے نام خط کے جواب کے بارے مےں درےافت کرتے رہے چوہدری نثار علی خان اتنی جلدی کسی کو دل کی بات بتانے والے نہےں انہوں نے ےہ کہہ کر اخبارنوےسوں کا آج کی تارےخ بتا دی کچھ مےڈےا ہاﺅسز نے تو خبر چلا دی کہ چوہدری نثار نے خط لکھ دےا لےکن جو لوگ چوہدری نثار کے انداز سےاست کو جانتے وہ بہتر سمجھتے ہےں کہ وہ کب خط لکھےں گے وہ حکومت کی تےار کردہ پچ پر نہےں کھےلےں گے بلکہ حکومت کو ٹف ٹائم دے کر اپنے مطالبات منانا چاہتے ہےں۔ وزےراعظم راجہ پروےز اشرف اپوزےشن لےڈر کے خط کا بے تابی سے انتظار کر رہے ہےں۔ پارلےمنٹ کی غلام گردشوں مےں نگران وزےر اعظم کی تقرری موضوع گفتگو بنی ہوئی ہے۔ چوہدری نثار نے دوٹوک الفاظ مےں کہا ہے کہ نگران وزےر اعظم کے لئے عبد الحفےظ شےخ کا دور دور تک امکان نہےں۔ انہوں نے کہا کہ آئی اےم اےف نے پاکستان کے نگران وزےر اعظم کا فےصلہ نہےں کرنا بلکہ قومی سےاسی قےادت نے کرنا ہے۔