ٹریکٹر انڈسٹری کو بحران سے نکلنے، پیداواری عمل تیز کرنے کیلئے تجاویز طلب

12 مارچ 2013
ٹریکٹر انڈسٹری کو بحران سے نکلنے، پیداواری عمل تیز کرنے کیلئے تجاویز طلب

لاہور )کامرس رپورٹر) وزارت خزانہ نے ٹریکٹر انڈسٹری کو جلد از جلد بحرانی کیفیت سے نکالنے اور صنعت کا پیداواری عمل تیزکرنے کے لیے سٹیک ہولڈرز سے تجاویز طلب کر لی ہیں۔ اس سلسلے میں صنعتکاروں کے ایک وفد نے گزشتہ روز وزیر خزانہ سلیم مانڈوی والا سے ملاقات کرکے انہیں ٹریکٹر انڈسٹری کی مشکلات سے آگاہ کیا۔ وفدکی قیادت پیاف کے چیئرمین ملک طاہر جاوید کر رہے تھے جبکہ لاہور چیمبرکے سابق صدور میاں انجم نثار اور چوہدری ظفر اقبال بھی اس موقع پر موجود تھے۔ملک طاہر جاوید نے وزیر خزانہ کو بتایا کہ ٹریکٹر انڈسٹری پر سیلز ٹیکس کی شرح پانچ فیصد سے بڑھا کر دس فیصد کرنے سے ٹریکٹر کی قیمت کسانوں کی قوت خرید سے زیادہ ہو گئی ہے جس کے نتیجہ میں انڈسٹری اور اس سے ملحقہ آٹو وینڈنگ انڈسٹری بندش کے قریب پہنچ چکی ہیں۔ ٹریکٹر سازی اور آٹو وینڈنگ انڈسٹری سے وابستہ ہزاروں افراد کے لیے بے روزگار ہونے کا اندیشہ پیدا ہو چکا ہے۔ ملکی ٹریکٹر انڈسٹری میں ایک لاکھ ٹریکٹر سالانہ بنانے کی صلاحیت موجود ہے۔