مسلم لیگ ن‘ تحریک انصاف اور جے یو آئی ف سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے: منور حسن

12 مارچ 2013
مسلم لیگ ن‘ تحریک انصاف اور جے یو آئی ف سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے: منور حسن

کراچی (نیوز ایجنسیاں) جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن نے کہا ہے کہ آئندہ انتخابات میں کسی جماعت سے باقاعدہ اتحاد نہیں کریں گے‘ منشور سے مطابقت رکھنے والی جماعتوں کے ساتھ سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے۔ خیبر پی کے میں جمعےت علمائے اسلام (ف)‘ پنجاب میں مسلم لیگ (ن)‘ تحریک انصاف ‘ سندھ میں قوم پرست جماعتوں اور کراچی میں ایم کیو ایم مخالف جماعتوں کے ساتھ سےٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے ، تمام سےاسی جماعتوں کو خارجہ، نام نہاد دہشت گردی کیخلاف جنگ اور معیشت سے متعلق متفقہ پالیسی منشور میں شامل کرنی چاہئے، بادامی باغ واقعہ ملکی تارےخ کا اندوہناک واقعہ ہے‘ متاثرین کے معاوضے میں اضافہ اور واقعے کی جلد تحقیقات کر کے ذمہ دار عناصر کو بے نقاب کر کے عبرتناک سزائیں دی جائیں۔ بنگلہ دیش میں پاکستان اور پاکستانی فوج کے حق میں نعرہ لگانے والوں کے قتل عام پر حکومت پاکستان اور فوج کی خاموشی افسوس ناک ہے۔ قوم ووٹ کی پرچی سے غربت‘ بےروزگاری‘ مہنگائی اور امریکی غلامی کا طوق دےنے والوں سے نجات حاصل کرے۔ جماعت اسلامی اقتدار میں آکر ان شاءاللہ تمام مسائل کو حل کرےگی۔ وہ گذشتہ روز ادارہ نورحق میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ محمد حسین محنتی‘ نسیم صدیقی‘ مسیحی پادری ایمانوئیل وکٹر، یونس سوہن ایڈووکیٹ اور دےگر بھی موجود تھے۔ سید منور حسن نے بادامی باغ واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ایسے واقعات نفرتوں کو جنم دیتے ہیں۔ حکومت پنجاب کی امداد قابل ستائش ہے مگر امدادی رقم ناکافی ہے۔ انتظامیہ مکمل طور پر ناکام نظر آتی ہے۔ وزیر داخلہ صرف خدشات اور دھمکیاں دیتے رہتے ہیں۔ حکمرانوں کے روےے تبدیل نہیں ہونگے، دہشت گردی ختم نہیں ہو گی۔ انہوں نے سانحہ عباس ٹاﺅن کی بھی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ آگ لگانے والے بیانات سے گریز کرنا چاہئے۔ پاکستان میں شیعہ سنی‘ مسلم اور غیر مسلم کا کوئی جھگڑا نہیں‘ کچھ عناصر بیرونی ایجنڈے کی تکمیل کےلئے فرقہ وارانہ اور مذہبی منافرت پھیلانا چاہتے ہیں۔ امریکہ بھارت کو خطے کا ٹھیکیدار بنانا چاہتا ہے، حکومت پاکستان بھی امریکی ونیٹو انخلا کے بعد کرزئی کی طرح اپنی پالیسی واضح کرے، آزاد خارجہ پالیسی سے متعلق انہوں نے کہا کہ خارجہ پالیسی پارلیمنٹ کی قراردادوں کے مطابق ترتیب دی جانی چاہئے۔ حسینہ واجد اپنی مقبولیت کا گراف بڑھانے کے لئے اسلام پسندوں پر عرصہ حیات تنگ کر رہی ہیں۔ جماعت اسلامی ملک بھر میں انتخابی اتحاد کے بجائے سیاسی جماعتوں سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریگی۔ نذیر مسیح نے کہا کہ بادامی باغ لاہور کا واقعہ پاکستان کو عالمی سطح پر بدنام کرنے کی سازش ہے۔ پادری عمانوئیل وکٹر نے کہا کہ بادامی باغ واقعہ مسیحیوں سے قیمتی اراضی چھیننے کی سازش تھی، پولیس نے اقلیتوں کی حفاظت کے بجائے لوٹ مار کرنے والوں کو تحفظ دیا۔ پاسٹر سیموئیل جارج نے کہا کہ جماعت اسلامی نے ہر مشکل گھڑی میں مسیحی برادری کا ساتھ دیا ہے جس پر ہم شکرگزار ہیں، پنجاب حکومت ملوث افراد کو سخت سزا دے اور متاثرین کے نقصان کا پورا پورا ازالہ کیا جائے، متاثرہ مقام پر الخدمت کے امدادی کیمپ لگانے پر جماعت اسلامی سے اظہار تشکر کرتے ہیں۔ 

مری بکل دے وچ چور ....

فاضل چیف جسٹس کے گذشتہ روز کے ریمارکس معنی خیز ہیں۔ کیا توہین عدالت کا مرتکب ...