پولیس اہلکاروں کے تبادلے کرانیوالے گروہ کا سرغنہ 2 ساتھیوں سمیت گرفتار

12 مارچ 2013

لاہور (اپنے نمائندے سے) سول لائنز پولیس نے جعلی ایم این اے اور ایم پی اے بن کر ٹیلی فون پر پولیس اہلکاروں کے مختلف تھانوں اور دفاتر میں تبادلے کروانے والے گروہ کے سرغنہ کو 2 ساتھیوں کے ہمراہ گرفتار کر لیا ہے۔ ملزم عاصم اسلم کافی عرصہ سے خود کو ایک بڑی سیاسی پارٹی کا ایم این اے، ایم پی اے اور منسٹر ظاہر کرکے ٹیلی فون پر اعلی پولیس افسران کو مختلف پولیس اہلکاروں کے تبادلوں کے لئے فون کرتا جن کے عوض وہ ان سے رشوت کے طور پر بھاری رقوم بٹورتا تھا۔ ملزم نے کچھ روز قبل حسام الدین کھوسہ ایم پی اے بن کر ایس ایس پی ایڈمن طارق عباس قریشی کو فون کرکے سب انسپکٹر محمد رفیق کے تبادلے کے لئے کہا جس پر انہیں شک گزرا جنہوں نے اپنے پی ایس او سب انسپکٹر غفور نیاری کو اس بارے میں خفیہ طور پر جانچ پڑتال کرنے کے لئے کہا ملزم عاصم اسلم کی جعلسازی پکڑی گئی جس پر سی سی پی او امجد جاوید سلیمی کے حکم پر ملزم کے خلاف ٹیلی گراف ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کرکے کرامت علی بھٹی انچارج انویسٹی گیشن سول لائن کو تفتیش سونپی گئی جنہوں نے شب و روز کی محنت کے بعد ملزم عاصم اسلم اور اس کے دوساتھیوں جونیئر کلرک شہزاد الیاس گھمن اور نائب قاصد بنیامین کو گرفتار کر لیا، دونوں ملزمان تبادلوں کے لئے شکار گھیرتے اور ان سے تبادلے کروانے کے لئے رشوت کے طور پر پیسے وصول کرتے جو یہ تینوں آپس میں بانٹ لیتے تھے۔دوران تفتیش ملزموں نے 20 سے زائد پولیس اہلکاروں کے مختلف تھانوں اور دفاتر میں تبادلوں کے عوض بھاری رقوم بطور رشوت لینے کا اعتراف کیا ہے۔سی سی پی او لاہور نے پی ایس او غفور نیازی اور انچارج انویسٹی گیشن سول لائنز کو نقد انعام اور تعریفی اسناد دینے کا اعلان کیا ہے۔