مقبوضہ کشمیر: شہید نوجوان سپردخاک، جنازے میں ہزاروں افراد کی شرکت، احتجاج، جھڑپیں، 15 افراد زخمی

Sep 11, 2018

سرینگر(اے این این ) مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں پر مبینہ طور پر بھارتی فورسز کے ہاتھوں پر اسرار انداز میں قتل ہونے والے نوجوان کو ہزاروں سوگواران کی موجودگی میں سپرد خاک کر دیا گیا ہے ، وادی میں شہری ہلاکتوں کیخلاف احتجاج کا سلسلہ جاری ہے جس میں بھارتی فورسز کے ساتھ جھڑپوں میں 15افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں ،نوجوانوں کو نشانہ بنائے جانے اور حریت رکن کے پر اسرار قتل پر مزاحمتی خیمہ برہم،وادی میں تعزیتی ہڑتال کے باعث نظام زندگی درہم برہم ،کاروباری مراکز بند،ٹرانسپورٹ غائب،کئی علاقوں میں تعلیمی ادارے بند،انٹر نیٹ اور موبائل سروس معطل ،ٹنگمرگ میں لاپتہ ہونے والے نوجوان کی 15روز بعد نعش برآمد،قتل کے الزام میں دو افراد رگرفتار،بھارتی فورسز کا 2017میں گرفتار ہونے والے تین نوجوانوں کو کپواڑہ کے سرحدی علاقے سے گرفتار کرنے کا دعویٰ ،کولہائی گلیشیئر میں جاں بحق ہونے والے دو نوجوانوں کی نعشیں ایئر لفٹ کر کے سرینگر پہنچا دی گئیں ۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز پلوامہ میں مبینہ طور پر بھارتی فورسز نے حریت رکن حکیم سلطانی کے بعد ایک اور نوجوان کو پر اسرار انداز میں قتل کر دیا تھا جس کی شناخت آصف نزیر والد نزیر احمد ڈار ساکن پنجگام اونتی پورہ کے طور پر ہوئی تھی۔ بھارتی فورسز نے شہید ہونے والے نوجوان کو ذاکر موسیٰ کے گروپ غزوۃ الانصار الہند کا رکن قرار دیا تھا جبکہ شہید کے اہل خانہ نے الزام مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ آصف ایک طالب علم تھا جو مقبوضہ وادی کو بھارتی قبضے سے آزاد دیکھنا چاہتا تھا اس لئے اسے بھارتی فورسز نے شہید کر دیا ہے ۔ آصف کو پنجگام میں اس کے آبائی قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا جس کی نماز جنازہ میں ہزااروں افراد نے شرکت کی ۔شہید کی تدفین کے بعد لوگوں کی بڑی تعداد نے سڑکوں پر نکل کر احتجاج کیا۔اس دوران بھارتی فورسز نے لوگوں کو منتشر کرنے کرنے کے لئے آنسو گیس کا استعمال کیا جس کے نتیجے میں تشدد بھڑک اٹھا اور مشتعل مظاہرین نے فورسز پر پتھراؤ شروع کر دیا جو کافی وقت تک جاری رہا اس دوران وقفے وقفے سے بھارتی اہلکاروں اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں بھی ہوتی رہیں جن میں 7افراد زخمی ہوگئے۔مختلف علاقوں میں لوگوں نے ریلیاں نکالیں اور مظاہرے کئے ۔کشیدہ صورتحال کے باعث کاروباری مراکز اور تجاری ادارے بند جبکہ سڑکوں سے ٹریفک غائب رہی۔اس دوران کئی علاقوں میں تعلیمی ادارے بھی بند رہے جبکہ انٹر نیٹ اور موبائل سروس کو معطل رکھا گیا۔ادھر وادی میں شہری ہلاکتوں اور حریت گ کے رکن حکیم الرحمان سلطانی کے نامعلوم بندوق برداروں کے بہیمانہ قتل کی مسلم کانفرنس کے ایک دھڑے، سالویشن مومنٹ، پیپلز لیگ، محاذ آزادی کے ایک دھڑے ، مسلم لیگ نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔ سالویشن مومنٹ چیئرمین ظفر اکبر بٹ نے کہا کہ معصوم لوگوں کی جان لینا نہ صرف غیر اسلامی ہے بلکہ غیر انسانی بھی ۔ظفر بٹ نے نسیم آباد حضرت بل میں ایک نوجوان آصف نذیر ڈار کی پر اسرار ہلاکت پر دکھ کا اظہار کیا ہے۔ محاذآزادی کے ایک دھڑے کے صدر محمد اقبال میر نے حکیم الرحمان اورحضرت بل نسیم باغ میںآصف نذیر ڈارکو نامعلوم بندوق برداروں کے ہاتھوں گولی مارکر ہلاک کرنے کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔مسلم لیگ نے بمئی سوپور میں غیبی ہاتھوں کے ذریعے حکیم الرحمان کو موت کی آغوش میں پہنچانے اور اچھ بل اسلام آباد میں وردی پوشوں کے ہاتھوں بلال احمد بٹ ساکنہ تانترے پورہ یاری پورہ کی ہلاکت پرپر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے غمزدہ خاندانوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ہے۔ لیگ کے وفود قائمقام چیرمین عبدالاحد پرہ اور جنرل سیکریٹری محمد رفیق گنائی کی قیادت میں ارشاد احمد پرہ، وحید احمد گوجری، غلام النبی راتھر، خورشید احمد ڈاراور عرفان احمد پر مشتمل بمئی سوپور اور تانترے پورہ کولگام گیا اورجنازوں میں شرکت کرنے کے ساتھ ساتھ لواحقین کے ساتھ تعزیت پرسی کی ۔دریں اثناء ٹنگمرگ میں چند روز قبل لاپتہ ہوئے نوجوان طالب علم کی لاش برآمد کی گئی ہے جبکہ پولیس کے مطابق اس معاملے میں مقتول نوجوان کے دو قریبی رشتہ داروں کو حراست میں لے لیا گیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق ٹنگمرگ سے 10 کلو میٹر دور کھی پورہ بالا میں 23 اگست کی شام کوپوسٹ گریجویشن کرنے والا 26 سالہ طالب علم معراج الدین تیلی ولد عبدالمجید تیلی گھر سے باہر نکلتے ہی اچانک لاپتہ ہوگیا اگرچہ لاپتہ ہونے کے ساتھ ہی اس کے لواحقین اور رشتہ داروں نے اسے ہر ممکن جگہ پر تلاش کیا تاہم جب مذکورہ بازیاب نہ ہوا تو لواحقین نے اس کی گمشدگی کی رپورٹ پولیس تھانہ ٹنگمرگ میں درج کرائی۔ پولیس نے اسکی تلاش شروع کرنے کے لیے کاروائی شروع کی جس دوران پولیس نے شک کی بنیاد پر نصف درجن افراد کو حراست میں لے لیا ۔ذرائع کے مطابق پولیس کو اسوقت بڑی کامیابی حاصل ہوئی جب اس نے امتیاز احمد وانی ولد غلام محی الدین وانی ارشاد احمد وانی ولد غلام احمد وانی ساکنان کھی پورہ بالا کو گرفتار کر کے ان سے پوچھ تاچھ کی جس دران دونوں نے جرم قبول کرتے ہوئے اس بات کا اقرار کیا کہ انھوںنے ہی 23 اگست شام کومعراج الدین تیلی کو اغوا کر کے پھانسی دی اور اس کی لاش کو نزدیکی نالے کے کنارے دفنا دیا ۔بعد میں پولیس نے سب ڈویڑنل مجسٹریٹ اور فارنسک ماہرین کی نگرانی میں رات کی تاریکی کے دران نالے سے لاش برآمد کرکے پولیس تھانہ ٹنگمرگ پہنچائی ۔اور اتوار کی صبح لاش کا ڈسڑکٹ اسپتال بارہ مولہ میں پوسٹ مارٹم کرنے کے بعد ضروری کاروائی عمل لانے کے ساتھ آخری رسومات کی خاطر لواحقین کے حوالے کی۔اس سلسلے میں اتوار کو ایس ڈی پی ٹنگمرگ امتیاز احمد اور ایس ایچ او سعادت علی نے مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران تفصیلات پیش کیں۔ٹنگمرگ پولیس نے اس سلسلے میں باضبط طور ایف آئی آر زیر نمبر 75 سال 2018 انڈر سکیشن 302 درج کرکے تحقیقات شروع کردی ہے ادھر جونہی مقتول نوجوان کی لاش آبائی گاوں لائی گئی تو وہاں کہرام مچ گیا۔مقامی سیول سوسائٹی نے پولیس کو کیس کی تہہ تک پہنچنے کے لئے اپنا تعاون فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ھے ۔نماز جنازہ کے بعد سسینکڑوںلوگوں کی موجودگی میں اشک بار انکھوں سے معراج الدین تیلی کو سپرد خاک کیا گیا۔ادھر بھارتی فورسز نے کپواڑہ کے کرناہ سیکٹر میں حد متارکہ پر واقع ٹیٹوال علاقہ میں 3 مبینہ جنگجوئو ں کو گرفتار کر نے کا دعوی کیا ہے ۔ذرائع کے مطابق پوچھ تاچھ کے دوران پتہ چلا کہ گرفتار کئے جنگجوئو ں کا تعلق تحریک لمجاہدین سے ہے ۔جنگجووں کا تعلق شمالی کشمیر کے بانڈی پورہ ضلع سے ہے اور وہ 2017 میں لاپتہ ہوئے تھے۔دریں اثناء انت ناگ پہلگام میں واقع کولہائی گلیشیر کو سر کرنے کے دوران حادثہ کا شکار ہوکر جاں بحق ہونے والے دو نوجوان کشمیری کوہ پیمائوں کی نعشوں کو ایئر لفٹ کرکے سرینگر پہنچا دیا گیا۔ دریں اثناء ریاستی حکومت بلدیاتی انتخابات غیر سیاسی و غیرجماعتی بنیادوں پر منعقد کرنے کیلئے پر تول رہی ہے تاکہ سیاسی جماعتوں کی طرف سے ممکنہ طور پر عدم شرکت کے اثرات کو زائل کیا جاسکے۔ معتبر ذرائع کا کہنا ہے کہ نیشنل کانفرنس کی طرف سے بلدیاتی و پنچایتی انتخابات کے بائیکاٹ کا اعلان اور پی ڈی پی کی ان انتخابات میں شرکت پر مخمصہ کے بعد غیر سیاسی اور غیر جماعتی سطح پر بلدیاتی انتخابات منعقد کرنے پر سنجیدگی سے غور کیا جا رہا ہے۔ ذرائع نے بتایاہم اس خیال پرسنجیدگی کے ساتھ غور و فکر رہے ہیں کہ بلدیاتی انتخابات کو غیر سیاسی بنیادوں پرمنعقد کرایا جائے۔ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ حکومت نے چنائو کرانے کا حتمی فیصلہ کیا ہے، اس امر کے باوجود کہ این سی نے بائیکاٹ کرنے کا اعلان کر رکھا ہے۔

مزیدخبریں