نیوکلر پوسچر پر نظرثانی خطرات سے بھری ہوئی ہے‘ فرحت اﷲ بابر

Sep 11, 2018

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی) پی پی پی پی کے سیکرٹری جنرل اور سینئر راہنما فرحت اﷲ بابر نے کہا ہے کہ ’’نیو کلیائی طرز‘‘ پر نظرثانی کی بات ایک اہم خیال ضرور ہے تاہم یہ خطرات سے بھرا ہواہے کیونکہ اس سے سابق صدر آصف علی زرداری کی طرف سے بھارت کو ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال میں پہل نہ کرنے کی پیشکش ذہن میں آ جاتی ہے جسے بھارت نے ممبئی حملوں کے بعد مسترد کر دیا تھا۔ فرحت اﷲ بابر نے یہ بات گزشتہ روز ’’میپنگ دی پالیسی ایجنڈا‘‘ کی افتتاحی تقریب میں خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس ’’پالیسی ایجنڈا‘‘ کی ایک اہم سفارش یہ ہے کہ نئی حکومت کو ’’نیوکلیئر پوسچر‘‘ پر نظرثانی کرنا چاہئے۔ فرحت اﷲ بابر نے کہا کہ متشدد انتہا پسندی کو عدم برداشت کی بات اسی وقت قابل بھروسہ ہو گی جب سچ کا سامنا کرنے کے لئے تیار ہوں۔ تردید کرنے کی طرزفکر سے نکلیں اور دس سال پرانے ممبئی حملوں کے کیس کو منطقی انجام تک پہنچا دیں۔ انہوں نے پالیسی کی ایک اور سفارش کے حوالے سے کہا کہ جب مولانا مسعود اظہر جیسے عسکریت پسند کو چین کی مدد سے اقوام متحدہ کی پابندیوں سے تحفظ دیا جائے تو عدم برداشت کا دعویٰ کھوکھلا ہو جاتا ہے۔ ایک اور تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ 18 ویں ترمیم کو رول بیک یا این ایف سی میں تبدیلی سے وفاق پر برا اثر پڑے گا۔

مزیدخبریں