سانحہ تھر سے سندھ حکومت میں ہلچل، جمیل الزمان نے استعفیٰ دیدیا: ذرائع

11 مارچ 2014

کراچی (سٹاف رپورٹر+ نیوز ایجسیاں) تھرکی قحط سالی، وزیراعظم کے دورہ مٹھی اور سپریم کورٹ  کے ازخود نوٹس نے حکومت سندھ کو ہلاکر رکھ دیا۔ پارٹی اورحکومتی ساکھ بچانے کیلئے پیپلزپارٹی نے وزراء کو برطرف کرنے کی بجائے استعفے لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ مخدوم جمیل الزمان نے بیماری کے باعث مستعفی ہونے کا فیصلہ کرلیا، حکومت سندھ میں اہم تبدیلیاں متوقع ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ صوبائی وزیر ریلیف مخدوم جمیل الزمان نے طبعیت کی خرابی کے باعث استعفیٰ دے دیا ہے، مخدوم جمیل الزمان نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ بیماری کے باعث ان کیلئے حکومتی اور سیاسی سرگرمیاں جاری  رکھنا مشکل ہے۔ منگل کو معالج کے مشورے پر وہ حتمی فیصلہ کریں گے، دوسری جانب وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ اور سپیکرآغا سراج درانی کو پارٹی قیادت نے مشاورت کیلئے دبئی طلب کرلیا ہے۔ تھرکی صورتحال پرغفلت برتنے کی وجہ سے پیپلزپارٹی اورحکومتی ساکھ بچانے کیلئے اہم مشاورت ہوگی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ جام مہتاب ڈہرسے قلمدان واپس جبکہ نئے صوبائی وزیر صحت کی تقرری سمیت اہم امور طے کئے جائیں گے۔ ادھروزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ نے تھرپارکر کی صورتحال کے ذمہ دار جن افسروں کی معطلی کے احکامات جاری کئے تھے، ان میں سے ایک بھی افسر باقاعدہ طور پر معطل نہیں کیا جاسکا۔ طاقتور سیاسی خاندانوں سے تعلق رکھنے والے یہ سرکاری افسران سیاسی اثرورسوخ استعمال کرکے معطلی سے بچ گئے۔ ان افسروں کے صرف تبادلوں کے احکامات جاری کئے گئے۔ حکومت سندھ کے نوٹیفیکیشنز کے مطابق کمشنر میرپورخاص غلام مصطفی پھل، ڈپٹی کمشنر مٹھی مخدوم عقیل الزمان، ایس پی مٹھی عابد قائم خانی اور اسسٹنٹ کمشنر اسلام کوٹ غلام حسین میمن کا تبادلہ کرکے انہیں ایس اینڈ جی اے ڈی رپورٹ کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔  حکومت سندھ نے ڈپٹی کمشنر (ڈی سی) نوشہرو فیروز کا تبادلہ کرکے انہیں فوری طور پر ڈی سی میرپور خاص مقرر کیا ہے۔ آصف علی زرداری نے وزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ کو دبئی طلب کر لیا جو آج کسی بھی وقت دبئی پہنچ جائیں گے جبکہ سندھ اسمبلی کے سپیکر آغا سراج درانی پہلے ہی دبئی میں موجود ہیں۔ جمیل الزمان کے خاندانی ذرائع کا کہنا ہے کہ جمیل الزمان نے خرابی صحت کے باعث اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے لیکن سندھ اسمبلی نے ان کے استعفے کی تصدیق یا تردید نہیں کی ہے۔جمیل الزمان نے کہا کہ میں 15 روز سے بیماری کے باعث بستر پر تھا اور میں نے دسمبر میں ہی حکومت کو قحط کے حوالے سے خبردار کر دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ گرمی کا موسم تھر میں زیادہ خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔