فحش سائین بورڈز کے خلاف کے ایم سی کا آپریشن تیز

11 مارچ 2014

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ کے وزیر بلدیات و اطلاعات شرجیل میمن کی ہدایات پر کے ایم سی کے محکمہ ٹیکس نے شہر کے متعدد علاقوں میں لگے فحش سائین بورڈز اور سڑکوں کے درمیان لگے سائین بورڈز ہٹانے کا سلسلہ تیز کردیا ہے۔ کلفٹن، شارع فیصل نارتھ ناظم آباد اور دیگر علاقو ںمیں لگے درجنوں فحش سائین بورڈز کے ساتھ ساتھ سینکڑوں کی تعداد میں سڑکوں کے درمیان پولز پر لگے سائین بورڈز کو ہٹا دیا گیا ہے۔ سینئر ڈائیریکٹر لوکل ٹیکس کے ایم سی کے مطابق مہم کو مزید تیز کردیا گیا ہے اور اس سلسلے میں جن جن اشتہاری کمپنیوں نے عدالتوں سے اسٹے آرڈرز لئے ہیں ان کے خلاف بھی عدالتوں سے رجوع کیا جائے گا۔ تفصیلات کے مطابق صوبائی وزیر بلدیات کی جانب سے شہر بھر میں لگے ہوئے غیر اخلاقی اور غیر قانونی سائین بورڈ اور بالخصوص سڑکوں کے درمیان میں پولز پر لگے ہوئے سائین بورڈز کو ہٹائے جانے کے احکامات کے بعد کے ایم سی کے محکمہ لوکل ٹیکس نے اپنی کارروائیوں کا آغاز کردیا ہے اور اب تک شہر بھر سے 5 ہزار سے زائد سائین بورڈز کو اتار لیا گیا ہے جبکہ گذشتہ دو روز کے دوران شہر کے پوش علاقوں میں لگائے گئے غیر اخلاقی اور فحش سائین بورڈز کے خلاف بھی بھرپور مہم کا آغاز کرکے درجنوں سائین بورڈز اتار کر تحویل میں لے لئے گئے ہیں۔ سنئیر ڈائیریکٹر راشد خان کے مطابق شہر کے علاقوں کلفٹن، میریٹ ہوٹل، شارع فیصل، کارساز، نارتھ ناظم آباد، گلبرگ، مین کلفٹن برج، یونیورسٹی روڈ، مین طارق روڈ، لانڈھی، کورنگی، ملیر، شاہ فیصل کالونی اور دیگر علاقوں میں مہم بھرپور انداز میں جاری ہے اور اب تک 5 ہزار سے زائد سائین بورڈز اتار لئے گئے ہیں۔ راشد خان کے مطابق کچھ اشتہاری کمپنیوں نے اس سلسلے میں عدالتوں سے حکم امتناعی حاصل کرلیا ہے، جس کے باعث رکاوٹوں کا سامنا ہے تاہم اس سلسلے میںکے ایم سی کے لیگل ڈپارٹمنٹ سے مشاورت کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے اور جلد ہی ان حکم امتناعی کے خلاف عدالتوں سے رجوع کرلیا جائے گا۔ راشدخان کے مطابق کئی علاقوں میں کے ایم سی کی ملکیت پر کنٹونمنٹ کی جانب سے اشتہاری کمپنیوں کو سائین بورڈز لگانے کے اجازت نامے دئیے گئے ہیں۔ اس سلسلے میں صوبائی وزیر کو بھی صورت حال سے آگاہ کیا گیا ہے اور جلد ہی کنٹونمنٹ بورڈز کی انتظامیہ کو بھی تحریری طور پر تمام صورت حال سے آگاہ کردیا جائے گا۔ انہوں نے کہا ہے کہ مہم کا سلسلہ جاری رکھا جائے گا اور شہر سے تمام غیر اخلاقی، غیر قانونی اور سائز سے بڑے سائین بورڈز کو اتار لیا جائے گا۔