ضلع مظفر گڑھ میں زیر زمین پانی آلودہ ہونے اور مضر صحت نمک کی دھڑلے سے فروخت اور استعمال

11 فروری 2018

کلروالی(نامہ نگار) ضلع مظفر گڑھ میں زیر زمین پانی آلودہ ہونے اور مضر صحت نمک کی دھڑلے سے فروخت اور استعمال سے تقریبا تیس فیصد آبادی آیوڈین کی کمی کا شکار ہوکر گلہڑ جیسے خطرناک مرض میں مبتلا ہو رہی ہے جس کی بڑی وجہ آلودہ پانی کا استعمال اور مضر صحت نمک ہے جو آیوڈین کی کمی کا سبب بن رہا ہے گلہڑ جیسے خطرناک مرض میں مبتلا خواتین و حضرات علاج کے لیے دربدر کی ٹھوکریں کھاتے پھرتے ہیں جبکہ علاج ان کی پہنچ سے دور ہوگیا ہے مستند ڈاکٹروں کی بڑی تعداد کی رائے کے مطابق اس مرض کا علاج اپریشن ہے جو مریض کرانے سے کتراتے ہیں اور یہ مرض ذیادہ تر مریضوں میں آیوڈین کے بغیر استعمال ہونے والے نمک کی وجہ سے ہوتا ہے حکومت اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کی عدم دلچسپی کی وجہ سے مضر صحت نمکیات کا استعمال روز بروز بڑھتا جا رہا ہے حکومت بے خبر ہو کر خواب خرگوش کے مزے لے رہی ہے اور مضر صحت نمک فروخت کرنے والے افراد صنعت کا درجہ حاصل کر رہے ہیں حکومت کو چاہیے کہ فوری طور پر پانی کے نمونے حاصل کر کے متاثرہ علاقوں میں واٹر فیلٹریشن پلانٹ لگائے اور مضر صحت نمک کی فروخت پر پابندی عائد کرے ۔
زیر زمین پانی آلودہ