ایم کیوایم کے دو گروپوں کی لڑائی سے انکا کوئی لینا دینا نہیں مرادعلی شاہ

11 فروری 2018

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سینیٹ آف پاکستان کے لیے سندھ سے جنرل نشستوں پرپاکستان پیپلزپارٹی کے تمام امیدواروں کے کاغذات نامزدگی کو ریٹرننگ افسر نے درست قرار دیکر منظور کرلیا۔ وزیراعلیٰ سندھ سید مرادعلی شاہ ہفتہ کوکابینہ ارکان اور ایم پی ایز کے ہمراہ الیکشن کمیشن پہنچے اور اپنے امیدواروں کے کاغذات کی جانچ پڑتال مکمل کرائی ،اس موقع پر سابق وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ اور چیئرمین سینیٹ رضاربانی بھی موجود تھے۔پاکستان پیپلزپارٹی کی طرف سے سینیٹ آف پاکستان کے انتخابات میں جنرل نشستوں پر حصہ لینے والے پیپلزپارٹی کے امیدواروں کی جانچ پڑتال کا مرحلہ مکمل ہوگیاہے۔ وزیراعلیٰ سندھ سیدمرادعلی شاہ ،کابینہ ارکان،ارکان اسمبلی اور امیدواروں کے ہمراہ مقررہ وقت پر الیکشن کمیشن پہنچے، ریٹرننگ افسر کی جانب سے امیدواروں کو دس بجے سے گیارہ بجے بلایاتھا تاہم وزیراعلیٰ سندھ سیدمرادعلی شاہ مقررہ وقت سے پہلے پہنچے اور تمام امیدواروں کے کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال کرائی اس موقع پر ریٹرننگ افسر نے بھی وقت کی پابندی اور دستاویزی کارروائی مکمل ہونے کو سراہا۔ ریٹرننگ افسر محمد یوسف خٹک نے پیپلزپارٹی کے امیدواروں رضاربانی، مولابخش چانڈیو،مرتضیٰ وہاب، امام الدین شوقین، ایاز مہر، مصطفی نواز کھوکھر ،دوست علی جیسر،محمدعلی شاہ جاموٹ،جاوید نایاب لغاری، قاسم سراج سومروکے کاغذات کو درست قراردیا۔اس موقع پر الیکشن کمیشن کے باہر میڈیا سے گفتگو میں وزیر اعلیٰ سندھ سید مرادعلی شاہ نے کہاکہ وہ کسی سیاسی جماعت کی ٹوٹ پھوٹ سے خوش ہیں اورنہ ہی اس سے فائدہ اٹھارہے ہیں۔جب پی ایس پی اور ایم کیوایم کے درمیان اتحاد ہوا تھا تب بھی خوشی ہوئی تھی اور ایم کیوایم کے دو گروپوں کی لڑائی سے انکا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔سید مرادعلی شاہ نے اس عزم کا اظہار کیا کہ سینٹ کے الیکشن میں پیپلزپارٹی سندھ سے تمام12نشستوں پر کامیابی حاصل کرے گی اور پیپلزپارٹی کے ویژن اور خدمت کو دیکھتے ہوئے ارکان اسمبلی ہمارے نمائندوں کو ووٹ دیں گے۔ سیدمرادعلی شاہ نے کہا کہ اگر سینٹ الیکشن میں کسی کو پیسوں کی آفر ہوئی ہے تو وہ پیسے دینے والے کا نام بتائے ،ہم ایسی کسی بھی کوشش کو نہ اچھا سمجھتے ہیں نہ ایسا کررہے ہیں۔ مرادعلی شاہ نے کہا کہ نیب پر انکے تحفظات تھے اور اب بھی ہیں نیب کا روہڑی کینال کو بند کرکے فصلوں اور کسانوں کو نقصان ہوا جس کا براہ راست اثر معیشت پر پڑا ہے۔ کرپشن کی آڑ میں ترقیاتی کاموں کو نہیں رکنا چاہیے۔ وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ ہماری خواہش ہے کہ ایم کیو ایم پاکستان کے اندرونی اختلافات مزید نہ بڑھیں ۔ گفتگو کرتے ہوئے مراد علی شاہ نے کہاکہ ایم کیو ایم میں بدقسمتی سے معاملات خرابی کی جانب بڑھ رہے ہیں ۔مراد علی شاہ نے ایم کیو ایم رہنماو¿ں کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے ہم پر بڑی باتیں کی ہیں کہ لوگ خواب دیکھ رہے ہیں ،جبکہ ایسا کچھ نہیں ہے، ہم سینیٹ انتخابات میں کامیابی کیلئے کوشش کررہے ہیں اورہمارے امیدوار سینیٹ انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں،ہر ممبر کی مرضی ہوتی ہے کہ وہ سینیٹ کا ووٹ کسے دیتا ہے ،ہم اپنے پروگرام اور امیدواران کے ساتھ ممبران اسمبلی کے سامنے حاضر ہوں گے اور امید ہے کہ ہمیں اچھی کامیابی حاصل ہوگی۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میں تو چاہتا ہوں کہ دونوں ایم کیو ایم مل جائیں۔ ایک سوال کے جواب میں مراد علی شاہ نے کہا کہ نیب کے اقدامات کے حوالے سے ہمیں پہلے بھی تحفظات تھے اب بھی ہیں ،ہم کرپشن کے سخت خلاف ہیں جہاں کرپشن ہورہی ہے وہاں پر کاروائی کرنی چاہیے مگر کرپشن کے خلاف کاروائی کی آڑ میں ترقیاتی کاموں کو نہ روکا جائے ،جیسا کہ نیب کی جانب سے گزشتہ ماہ روہڑی کنال کو بندکردیا تھا ،جس کے باعث فصلوں کو پانی نہیں مل سکا،اور لوگوں کو پانی نہ ملنے کی وجہ سے اپنے ٹیوب ویل چلانے پڑے ،بجلی اور ڈیزل خرچ کرنا پڑا،اس سے معیشت کو نقصان پہنچا۔

سینیٹ/ الیکشن